Home » Canterbury Tales » The knight’s tale – 7

The knight’s tale – 7

-1- نائٹ کی کہانی:

بہادری اور زندگی میں بلند مقاصد کے حامل نائٹ کو احتراماََ سب سے پہلے کہانی سنانے کے لئے کہا گیا – نائٹ نے شعری وزن اور بحر میں شجاعت پر مبنی ایک رومانی کہانی سنائی- یہ یونان کے شہر تھیبن ( THEBAN) کے دو جواں سال بہادر سُورماؤں ، آرسائٹ اور پالامون کا قصہ ہے-

Arcite on his horse

Arcite on his horse

آپس میں کزن ، دونوں سُورما، ایتھنز کے بادشاہ تھیسیوز/THESEUS کی سالی ایمیلی کی محبت میں دل ہار بیٹھے تھے-

Once upon a time, old stories tell us,
There was a duke whose name was Theseus.
Of Athens he was lord and governor,
And in his time was such a conqueror

یہ دونوں جوان ایک بار کسی جنگ میں ہارنے کے بعد قیدی بنا لئے گئے- قید خانے کی ایک کھڑکی شاہی باغیچے میں کھُلتی تھی- جہاں بادشاہ کی حسین ملکہ اور ملکہ کی پھولوں جیسی خوبصورت بہن ٹہلنے آیا کرتی تھیں- بادشاہ کی سالی باغیچے سے پھول چُنا کرتی تھی- بس کیوپڈ نے تیر چلایا اور دل گھائل ہوگیا-

018-emelye-the-queens-sister-in-the-palace-garden
So year by year it went, and day by day,
Until one morning it befell in May
That Emily, a fairer sight to see
Than lilies on a stalk of green could be,
And fresher than the flowers May discloses–
Her hue strove with the color of the roses
Till I know not the fairer of the two–

She thought of the two princes/ A painting

She thought of the two princes/ A painting

اب جواں مردی کی آزمائش کا مرحلہ تھا- بادشاہ کے رائے کے مطابق، ایک سال تک لشکر تیار کرنے کے بعد وہ دونوں ایک دوسرے کے مدِّ مقابل آئے، ایک مارا گیا اور دوسرے کو اپنی محبت نصیب ہوئی- پالامون نے بڑی شان و شوکت سے شہزادی ایمیلی سے شادی کی-

Wedding of Palamon and Emelye

Wedding of Palamon and Emelye


Original text:
Bitwixen hem was maad anon the bond
That highte matrimoigne or mariage,
By al the conseil and the baronage.
And thus with alle blisse and melodye
2240 Hath Palamon ywedded Emelye;
And God, that al this wyde world hath wroght,
Sende hym his love that hath it deere aboght,
For now is Palamon in alle wele,
Lyvynge in blisse, in richesse, and in heele,
2245 And Emelye hym loveth so tendrely,
And he hir serveth al so gentilly,
That nevere was ther no word hem bitwene,
Of jalousie, or any oother teene.
Thus endeth Palamon and Emelye,
2250 And God save al this faire compaignye! Amen.

Translation:
The two at once were joined in the grand
And holy union that is known as marriage
Before the council and the baronage.
And so amid much bliss and melody
Has Palamon been wed to Emily;
So God on high, who all this world has wrought,
Has sent to him his love so dearly bought.
Now Palamon had all that’s known as wealth,
To live in bliss, in richness and in health;
And Emily loved him so tenderly,
And he served her with such nobility,
That not one word between this man and wife
Would ever be of jealousy or strife.
So ended Palamon and Emily,
And God save all this lovely company! Amen.

نائٹ کی کہانی تقریباََ 2240 سطور پر مشتمل ہے جس میں بے جِگری، بہادری اور معرکہ آرائی کا ذکر سُن کر تمام مسافر عَش عَش کر اُٹھے . . . . کہ واقعی دلبری تو یہی ہے کہ جس کو چاہا جائے اُس کی خاطر ہر چیز قربان کردی جائے، اور بےخوف ہو کر انتہا تک چلے جانا بزدلوں کا شیوہ نہیں- بہادری اور شجاعت بہت عظیم اوصاف ہیں- اس موضوع پر فلم بھی بن چُکی ہے لیکن اگر وہ فلم چاوسر صاحب دیکھ لیتے تو رُوٹھ جاتے کہ فلم کی کہانی ِ چاوسر کی اصل کہانی سے بہت فرق ہے-

اِسی اثنا میں ملّر نے ہنگامہ کھڑا کر دیا کہ اگلی کہانی وہ سنائے گا –

6 thoughts on “The knight’s tale – 7

  1. so dying for a princess was the noble cause, or this is the way how they evaluate the bravery?
    anyways , nice description, and very smooth translation with a touch of your own style. Pictures made it a superb article.
    medieval literature was never so fun to read.

    Like

  2. بہت مزا آیا خاص کر اوریجنل ٹیکسٹ اور تصویروں نے لُطف دوبالا کر دیا
    یعنی کہ 14ویں صدی میں فوجی اتنے سیانے نہیں ہوئے تھے کہ آرسائٹ کچھ لے دے کر شہزادی ایمیلی سے دستبردار ہوجاتا – خواہ مخواہ جان سے گیا

    Like

    • عنایت ہے محترم، واقعی ہزار داستان والی بات ہے مگر اِس فریم کہانی میں آپ چودہویں صدی کا انگلستان دیکھ رہے ہیں- یہ رینے سانس کا نقطہء آغاز ہے-

      Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s