Home » Canterbury Tales » The Prioress’s Tale – 21

The Prioress’s Tale – 21

-پرائرس کی کہانی:

Prioress_back

جنرل پرولؤگGeneral prologue . . .یعنی تعارفی حصے میں پرائرس کا نام مادام ایج لین ٹائن بتایا گیا ہے جو انتہائی نفیس ٹیبل مینرز یا آدابِ طعام سے آراستہ ہے۔

prioress

پرائرس کی کہانی ایک شہید بچے کے بارے میں ہے جو جِیوز کے ہاتھوں مارا گیا۔ یہ مرکزی خیال ازمنہء وسطیٰ کے عیسائی ادب میں عام پایا جانے والا موضوع ہے ۔ جبکہ بعد ازاں اِن موضوعات کو یہودی تعصب اور تنافر پر مبنی ہونے کی وجہ سے تنقید کا نشانہ بنایا گیا ۔ پرائرس نے کنواری مریم سے ہدایت کی دعا کرتے ہوئے اپنی بات کا آغاز کیا۔

099-the-prioresss-tale

پرائرس نے جو کہانی سُنائی وہ ایک مناجات پڑھنے والے بچے کے متعلق ہے جو مقدس مریم کے بارے میں ایک لاطینی نظم پڑھ رہا ہے جس کے معانی بھی وہ نہیں جانتا ۔ یہ کمسِن عیسائی بچہ ایک ایسے علاقے میں رہتا تھا جہاں یہودی آبادی ‘گھیٹو’ قائم تھی اور عیسائی اقلیّت میں تھے۔

آبادی کی اکثریت بدطینت اور کینہ پرور جِیوز پر مشتمل تھی۔ آبادی کے ایک کنارے، عیسائیوں نے اپنے بچوں کے لئے ایک سکول کھولا جہاں ایک بیوہ کا سات سالہ ہونہار بچہ بھی پڑھتا تھا۔ یہ ننھا بچہ اِس کم عمر میں بھی اپنے مذہب سے بہت گہری محبت رکھتا تھا۔ اپنے مذہب کی محبت اور تعظیم اِس ننھے بچے کے دل میں راسخ ہوچکی تھی۔ اُس نے اپنے سے بڑے ایک طالبعلم سے ایک لاطینی نظم سیکھی جس میں مقدّس مریم کی صفت اور مدح بیان کی گئی تھی۔ ابھی یہ ننھا بچہ لاطینی الفاظ کے معانی سے ناآشنا تھا مگر اپنے شوق کے وجہ سے اِس نظم کو گنگناتا چلا جاتا۔

264-prioresss-tale

ایک دن یہ بچہ سکول سے واپس آتے ہوئے ایک مدحیہ نظم گُنگنارہا تھا ۔ارد گرد کے جیُوز اس بات پہ سخت برہم ہوئے۔ اِن جِیوز کے دل میں شیطان نے حقد ، حسد اور نفرت بھر رکھی تھی۔ کچھ جِیُوز ،نفرت کی وجہ سے اُس بچے کا گلا کاٹ دیتے ہیں- وہ ظالم ، . . بچے کا سر تن سے جُدا کرکے اُس کا جسم گندگی میں پھینک کر چلے گئے۔

بچے کی ماں ساری رات اُسے تلاش کرتی رہی، جیوُز کی منتیں کرتی رہی کہ بچے کا پتہ بتا دیں۔ آخرکار بچے کا مردہ جسم گڑھے سے مل گیا۔

352 small

بچے کے کٹے گلے سے مناجات کی آواز سُن کراُس کی ماں کیا دیکھتی ہے کہ بچہ سر تن سے جُدا ہونے کے باوجود نظم گا رہا ہے ۔ دیگر عیسائی محلے دار بھی اکٹھے ہوگئے اور اِس معجزے پر حیران رہ گئے۔

323 Well removed Bulent moved

محلّے داروں نے ایک بڑے گرجا گھر کے بڑے پادری کو بلایا کہ وہ خود آکر اِس معاملے کو دیکھے اور تشریح کرے۔ بڑے پادری نے آکر یسوع مسیح اور اُس کی مقدس ماں کی حمد و ثنا بیان کی، . . بچے کو وہاں سے اُٹھا کر قریبی خانقاہ میں لے جایا گیا۔ اِس تمام وقت میں . . . بچے کے سر کٹے جسد سے مناجات کی آواز آتی رہی۔

vol-1-185-prioresses-tale

بچے کی تدفین سے پہلے اُس پر مقدس پانی ڈالا گیا تو وہ پھر بولنا شروع ہوگیا۔پادری نے بچے سے پوچھا کہ وہ کس سبب مرنے کے بعد بھی بولنے کے قابل ہوا؟

247-prioresss-tale

بچے نے بتایا کہ . . . مقدس مریم نے اُس کی زبان پہ ایک کراماتی دانہ رکھا ہوا ہے جس کی وجہ سے وہ کٹے گلے کے ساتھ بھی راہِ حق میں قربان ہوتے ہؤئے یہ پڑھ رہا ہے:

Alma Redemptoris Mater
(Kindly mother of the Redeemer)

پادری نے بغور دیکھا تو معلوم ہوا کہ . . . واقعی وہاں مٹر جتنا ایک کراماتی دانہ موجود ہے۔ جونہی وہ کراماتی دانہ ہٹایا گیا تو بچے کا انتقال ہوگیا ۔ بڑے پادری نے یہودیوں پر لعنت اور پھٹکار بھیجی۔ بچے کو شہیدوں کی طرح شان و شوکت سے دفنایا گیا۔ کہانی کے اختتام پر بچے کی ناگہانی موت پر نوحہ اور ماتم ہے۔

Edward Burne-Jones - The Prioress' Tale

یہ اور اِس جیسی کئی خونیں کہانیاں اُس وقت میں عام تھیں جو کلیسا کی طرف سے بیان کی جاتی تھیں۔ ایک اور ذریعہ کے مطابق ، بارہ سو نوّے عیسوی میں جیوز پر، . . .انگلستان میں پابندی تھی، جو کہ کم و بیش اِس کینٹربری کہانیوں کی تحریر سے سو سال پہلے کی بات ہے۔

One thought on “The Prioress’s Tale – 21

  1. بہت اعلی . . مصنفہ کی تحریر قابل ستائش ہے. . تصاویر دیکه کر کہانی میں جان پڑ گئی.

    Like

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s