Home » Canterbury Tales » The Monk mourns the De Julio Cesare – 34

The Monk mourns the De Julio Cesare – 34

چودہویں صدی کے مشہور شاعر جیفری چاوسر کی طویل نظم کینٹربری ٹیلز جاری ہیں، اُنتیس مسافر ، کینٹربری شہر کے بڑے کلیسا کی زیارت کے لئے سفر کررہے ہیں۔ سب مسافروں نے سفر کی طوالت اور اُکتاہٹ کو کم کرنے کے لئے آپس میں کہانیاں سنانی طے کیں۔ جب مونک کی باری آئی تو اس نے ایک ثابت کہانی کی بجائے مختلف نامور شخصیات کے دردناک انجام سنائے۔

جولیئس سیزر

اب مونک، بارہواں ماجرا، جولیئس سیزر کا سنا رہا ہے جو کہ سکندر اعظم سے بے حد متاثر تھا اور اس سے بڑھ کر فاتح عالم بننا چاہتا تھا تاہم دنیا فتح کرنے میں سکندر اعظم کی ہمسری نہ کرسکا۔ جولیئس سیزر نے زندگی کا پیشتر حصہ جنگی معرکہ آرائی میں صرف کیا اور تاریخ میں ایک بہادر جنگی جرنیل کے طور پہ یاد رکھا گیا۔ قبل مسیح کے کئی مؤرخین نے جولیئس سیزر کا احوالِ زندگی قلم بند کیا اور اُس کی زمینی اور بحری فتوحات کے بارے میں لکھا ۔

slide12-julius-caesar

جولیئس سیزر سویں صدی قبل مسیح کا ایک رومن جرنیل، سیاستدان، کونسلر اور لاطینی نثر نگار تھا۔ اُس نے کئی ایسے اقدامات کئے جس کے نتیجے میں محدود رومن جمہوریہ کا زوال ہوا ، اور ایک عظیم رومن سلطنت ظہور میں آئی۔

کئی موجودہ ممالک بشمول انگلستان، سپین، فرانس، اٹلی، یونان، ترکی اور مصر ، اِس عظیم سلطنت کا حصہ تھے۔ اِس رومی سلطنت زبان لاطینی اور یونانی تھی۔ مغربی رومی سلطنت کا مرکز روم جبکہ مشرقی بازنطینی سلطنت کا دارالحکومت قسطنطنیہ تھا۔ مغربی رومی سلطنت476میں جرمن وِزی گوتھوں کے ہاتھوں تباہ ہوئی جبکہ بازنطینی سلطنت1453میں عثمانیوں کے ہاتھ فتح ہوئی۔ مغربی تہذیب کی ثقافت، قانون، طرزِ حیات، فنون، زبان، مذاہب، طرزِ حکومت، افواج اور تعمیرات میں آج بھی رومی سلطنت کی جھلک نظر آتی ہے۔

جولیئس سیزر اور قلوپطرہ کا موضوع بھی مؤرخین اور لکھاریوں کے لئے دلچسپی کا محور رہا ہے ۔ کہا جاتا ہے کہ جب اس نے مصر فتح کیا تو وہاں کی ملکہ قلوپطرہ کی زلفوں کا اسیر ہوگیا اور کافی عرصہ وہاں مقیم رہا۔ تاہم اِ س بارےمیں کئی مختلف روایات ملتی ہیں ۔ البتہ مصّوروں اور فلم سازوں نے اِس موضوع پہ خوب طبع آزمائی کی ۔

julius-caesar-cleopatra-halloween-costume
caesarandcleopatra
Caesar_and_Cleopatra_-_1945_-_poster
MV5BMTM0MzAwMTcwOV5BMl5BanBnXkFtZTcwNzY2NDQyMQ@@._V1__SX961_SY539_
MV5BMjE2NjI4NzI0Ml5BMl5BanBnXkFtZTcwNjQxNTAwMQ@@._V1__SX961_SY539_
41hk3428TFL._SL500_AA240_

سکندر اعظم کی طرح جولیس سیزر بھی پیدائشی طور پر مرگی کا مریض تھا۔ وہ دورے کی حالت میں سرِ دربار بے ہوش ہوجاتا۔ مونک سناتا ہے:

JULIUS CAESAR-100BC- 44BC

Through wisdom, manhood, and great labor’s throes
From humble bed to royal majesty
This Julius as a conqueror arose
For he won all the West by land and sea
By strength of hand and by diplomacy
And made each realm to Rome a tributary
And then of Rome the emperor was he
Till Fortune would become his adversary

By wisdom, manhood and great labor Julius the Conqueror rose from humble birth to royal majesty, and won the entire occident over land and sea by the strength of his hand or by treaty, and made it tributary to Rome. And afterwards he was emperor, until Fortune became his adversary

بہادر پامپے ، جولیئس کا ایک سپہ سالار تھا اور جولیئس کی بیٹی ، جولیا کا شوہر تھا۔ جولیا کے مرنے کے بعد اِن دونوں میں پھوٹ پڑ گئی۔ بہت عرصہ خانہ جنگی میں مصروف رہنے کے بعد ، جولیئس نے حریف جرنیل پامپے کو شکست دی اور اسکندریہ میں اسے قتل کردیا گیا۔ پامپے کا کٹا ہوا سر ، اور جولیئس کی عطا کردہ مہر ، جب جولیئس کو پیش کئے گئے تو وہ آبدیدہ ہوگیا۔ مونک کہتا ہے:

O mighty Caesar, who in Thessaly
Faced Pompey, your own father-in-law, who drew
About him in the East all chivalry
As far as where each day dawn breaks anew
Through your knighthood that host you took and slew
(Except the few who then with Pompey fled
The East thereby put in such awe of you
Thank Fortune that so well you marched ahead

Here I’ll bewail a little, if I might
Pompey the Great, this noble governor
Of Rome who from the fray had taken flight
One of his men, a false and traitorous cur
Beheaded him that he might win the favor
Of Julius, who received the severed head
Alas, Pompey the Eastern conqueror,
That to such end by Fortune you were led

O mighty Caesar, in Thessaly you made war against Pompey, your father-in-law, who controlled all the chivalry of the orient as far as dawn of day, and by your knighthood you did capture and slay all except a few people who fled with him. Thus you did put the orient in awe, thanks to Fortune who aided you so well. But now I will bewail this Pompey a little while, this noble governor of Rome, who fled in this battle. One of his men, I say, a false traitor, struck off his head and brought it to Julius to win his favor. Alas, Pompey, conqueror of the orient, that Fortune should have brought you to such an end

 Caesar Addressing his Troops


Caesar Addressing his Troops

مصر سے واپسی پر سیزر نے سربراہ مملکت کے طور پر روم کے امور سنبھالے اور شاید وہی دنیا کا پہلا جرنیل تھا جو کہ بادشاہ بنا ۔ روم میں بہت سی اصلاحات کروائیں۔ رومن کیلنڈر کو تبدیل کر کے جولیئن کیلنڈر متعارف کروایا جو کہ گریگورین کیلنڈر کے آنے تک رائج رہا ۔ دونوں کیلنڈروں میں فرق نکالیں تو کچھ گھنٹوں کا ہی ہوگا۔

سلطنت روم کی کونسل نے سیزر کو اٹلی کے علاوہ سبھی ملکوں کا بادشاہ بنانا طے کرکے اس کے تخت پر بیٹھنے کی تاریخ مقرر کر لی ۔ دوسری طرف اس کے ساتھی مارکوس جونیئس بروٹس نے دیگر کے ساتھ مل کر اس کے قتل کی سازش شروع کردی۔ ان لوگوں کا کہنا تھا کہ سیزر کو بادشاہ بننے کا کوئی حق نہیں کیونکہ بادشاہ بننا روم کے قانون کے خلاف ہے۔ اس سے صرف سیزر ہی روم کے سیاہ و سفید کا مالک بن جاتا۔

9780486113661_p0_v2_s260x420

To Rome again repaired this Julius
With laurel crowned, upon his victory.
Then came the time when Brutus Cassius,
Who envied Caesar’s high prosperity
Began conspiring in full secrecy
Against his life. With subtlety he chose
The place of death, and planned that it should be
By way of daggers as I shall disclose

Julius returned to Rome in his triumph, crowned high with laurel. But at one time, Brutus Cassius, who ever bore ill-will to his high estate, made a secret deceptive conspiracy against him, and chose the place where he should die by poniards, as I will tell you

800px-Jean-Léon_Gérôme_-_The_Death_of_Caesar_-_Walters_37884

مارچ 44 قبل مسیح میں اسے سر دربار قتل کردیا گیا۔ قاتلوں کا سربراہ بروٹس تھا۔ دربار کے بیشتر اراکین نے سیزر کو گھیر لیا ۔ اُسے بہت سی کاری ضربیں لگائیں۔

800px-Cesar-sa_mort

زخمی سیزر، دربار میں فرش پہ گِرا تڑپتا رہا ۔ اُس نے اپنے آپ کو برہنہ ہونے سے بچانے کی کوشش کی۔اِسی اثنا میں سیزر نے قاتلوں میں اپنے ساتھی بروٹس کی شرکت دیکھی تو کہا کہ: بروٹس تم بھی؟ پھر تو سیزر کو ضرور مر جانا چاہئے۔

et_tu_brute_bumper_sticker-ra42965f7f95e40c7877c47b4d4ca6612_v9wht_8byvr_512
app4j6dy1yrn8kki

سیزر کا یہ جملہ آج عام طور پر گفتگو میں اُس وقت استعمال کیا جاتا ہے جب اپنا کوئی قریبی شخص ہی انتہائی دیدہ دلیری سے دھوکہ دے ۔

article-2216396-157617A8000005DC-751_634x511

سیزر کو قتل کرکے قاتلوں نے اُس کے خون سے ہاتھ دھوئے۔ سیزر کے قتل کے نتیجے میں روم میں خانہ جنگی شروع ہوگئی جس میں بروٹس کے تمام ساتھی مارے گئے جبکہ اس نے خود کشی کرلی۔

The world-renowned Royal Shakespeare Company returns to BAM with a new twist on Shakespeare's Julius Caesar. Set in present-day Africa and featuring an all-black cast, this visionary production echoes recent regime struggles throughout the continent. The
Julius caesar

This Julius to the Capitol one day
Had made his way, as frequently he chose
There fell upon him then without delay
This traitor Brutus and his other foes
Who with their daggers gave him several blows
And left him there to die when they were through
He groaned at but one stroke for all his throes
Or else at two, if all his tale is true

Julius_Caesar_by_Crowley_S

This Julius Caesar was so manly hearted
And had such love for stately probity
That, even as his wounds so sorely smarted,
He drew his mantle over hip and knee
So that his private parts no one could see
As he lay in a daze, the deathly kind
And knew that he was wounded mortally
Thoughts of decorum still were in his mind

Julius Caesar's death at the hands of Brutus and Gaius Cassius Longinus, and Porcia's suicide

Julius Caesar’s death at the hands of Brutus and Gaius Cassius Longinus, and Porcia’s suicide

One day, as he was accustomed, this Julius went to the Capitol, and there this false Brutus and his other foes seized him without delay and wounded him with many wounds, and there let him lie. And he never groaned except at one stroke, or else two, unless the books are false. So manly of heart was this Julius, and so well he loved dignified decorum, that with all his deadly sore wounds he cast his mantle over his hips, so that none should see his nakedness. Thus, as he lay dying in a trance, and knew truly that his life was spent, yet had he thought of dignity

murder-caeser

مونک آخر میں پھر نوحہ پڑھتا ہے کہ اے مؤرخو! تم نے کیا الم ناک حال بیان کئے ہیں اِن دونوں سُورماؤں کے، جن پہ پہلے قسمت مہربان تھی اور پھر دغا دے گئی ۔ طاقت، اقتدار اور تاج کبھی کسی کے نہیں ہوتے ۔ تو. . میرے ہم سفرو اور ساتھیو، ایسی آنی جانی شے پہ اعتبار کرنا ہی لا حاصل ہے۔

Lucan, you’re one authority I’ll note,
Suetonius, Valerius also
The story’s fully there in what you wrote
Of these two conquerors; to them we know
That Fortune first was friend and later foe
No man can put trust in her favor long,
We must keep both eyes on her as we go
These conquerors bear witness who were strong

Lucan, I commit this story to you, and to Suetonius, and Valerius also, who wrote beginning and end of it, how to these two great conquerors at first Fortune was friend and then their foe. Let no man trust long to have her favor, but evermore be watchful of her. Be warned by these mighty conquerors

cute_caesar__et_tu_bwute___by_kevinbolk-d3coeny
et_tu__brute__by_themrock-d3h4zph
et-tu-brute
julius-caesar-quotes-1

5 thoughts on “The Monk mourns the De Julio Cesare – 34

  1. Pingback: The End of Monk’s Tale – 40 | SarwatAJ- ثروت ع ج

  2. سب سے پہلے تو آپ کی اس مفید کاوش اور تمام معلوماتی تحاریر کے لیے شکریہ۔
    تحریر پڑھتے ہوئے بیچ میں بار بار تصاویر آنے سے تحریر کی روانی متاثر ہوتی محسوس ہوئی۔ چونکہ موضوع تاریخی نوعیت کا ہے تو میرے خیال میں تاریخی تصاویر تک محدود رہنا اس کی تاثیر کو بڑھائے گا۔ کچھ تصاویر، جیسے سٹک مین فگر والی (آخری سے پہلی)، غیر ضروری محسوس ہوتی ہیں۔ یا جیسے ایک تصویر میں صرف متن ہی ہے، اس متن کو ہی بہتر فارمیٹنگ کے ساتھ بحیثیت تصویر کے بجائے بحیثیت متن شامل کیا جاتا تو زیادہ خوبصورت لگتی۔
    جو باقی تصاویر ہیں، ان کو بھی بہتر مینیج کیا جا سکتا ہے۔ جیسے بعض جگہ (مثلاً جہاں کئی ایک جیسی تصاویر ایک موضوع پر ہوں) یہ مفید ہوگا کہ ایک تھمبنیلز کا مجموعہ ہو اور ان پر کلک کر کے بڑے حجم کی تصاویر دیکھی جا سکیں۔ اس طرح ایک ہی تصویر کی جگہ میں کئی تصاویر کا حوالہ مل جائے گا اور دلچسپی رکھنے والے قارئین انہیں تفصیلاً دیکھ بھی سکیں گے۔
    میرے خیال میں اگر اس بات کا تھوڑا سا خیال کر لیں تو تحریر کی خوبصورتی بہت بڑھ جائے گی اور تحریر قارئین کو زیادہ کھینچے گی۔

    Liked by 1 person

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s