Home » Life » 4th Part/ A Glimpse of Character Sketch by Qura’an

4th Part/ A Glimpse of Character Sketch by Qura’an

حصہ چوتھا، قُرآنِ پاک میں بیان کردہ شخصی اوصاف میں سے چند ایک ، اختصار کے ساتھ

4th part /A little effort to put down some good qualities of a character, described by the Holy Qura’an

-پارہ4:

-1- مسلمانوں میں باہم اتحاد ہونا

-اللہ پر ایمان لانے کے بعد آپس میں اتحاد قائم کرنا کیونکہ انسانوں کا تعلق، اللہ کے احکامات کے مطابق ہی، درست سمت میں پروان چڑھ سکتا ہے۔ تقویٰ کے ساتھ اتحاد کا حکم اِس بات کی طرف اشارہ ہے کہ اللہ سے ڈرنے والے ہی اتحاد کے باہمی تقاضے پورے کرسکتے ہیں۔

-سورۃ آلِ عمران / آیت 102-103/ يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اتَّقُوا اللَّهَ حَقَّ تُقَاتِهِ وَلَا تَمُوتُنَّ إِلَّا وَأَنتُم مُّسْلِمُونَ- وَاعْتَصِمُوا بِحَبْلِ اللَّهِ جَمِيعًا وَلَا تَفَرَّقُوا ۚ اے ایمان والو الله سے ڈرتے رہو جیسا اس سے ڈرنا چاہیئے اور نہ مرد مگر ایسے حال میں کہ تم مسلمان ہو٭ اور سب مل کر الله کی رسی مضبوط پکڑو اور پھوٹ نہ ڈالو

-2- بھلے کاموں کی دعوت دینا اور برائیوں سے روکنا

-ایمان والوں کو مخاطب کرکے بتلادیا گیا کہ فلاح اور کامیابی کے لئے لازم ہے کہ اِن میں سے کچھ لوگ ایک اہم ذمہ داری نبھاتے رہیں اور یہ ذمہ داری نیکیوں کی دعوت دینے ، بھلائیوں کو عام کرنے اور بُرے کاموں سے روکنے کی ہے۔

-سورۃ آلِ عمران/ 104/ وَلْتَكُن مِّنكُمْ أُمَّةٌ يَدْعُونَ إِلَى الْخَيْرِ وَيَأْمُرُونَ بِالْمَعْرُوفِ وَيَنْهَوْنَ عَنِ الْمُنكَرِ ۚ وَأُولَـٰئِكَ هُمُ الْمُفْلِحُونَ/اور چاہیئے کہ تم میں سے ایک جماعت ایسی ہو جو نیک کام کی طرف بلاتی رہے اوراچھے کاموں کا حکم کرتی رہے اور برے کاموں سے روکتی رہے اور وہی لوگ نجات پانے والے ہیں۔

-3- یتیموں کے مال کی حفاظت کرنا

قرآن حکم دیتا ہے کہ یتیموں کا مال انھیں ایمانداری سے دے دیا جائے اور اُن کے مال میں سے اچھی چیز کے بدلے بُری چیز نہ ڈال دی جائے ، اور نہ ہی ان کے مال کو اپنے مال میں شامل کرنے کی گناہ گارحرکت کی جائے۔

-سورۃ النساء / آیت 2/ وَآتُوا الْيَتَامَىٰ أَمْوَالَهُمْ ۖ وَلَا تَتَبَدَّلُوا الْخَبِيثَ بِالطَّيِّبِ ۖ وَلَا تَأْكُلُوا أَمْوَالَهُمْ إِلَىٰ أَمْوَالِكُمْ ۚ إِنَّهُ كَانَ حُوبًا كَبِيرًا/ اوریتیموں کوان کے مال دے دو اور ناپاک کو پاک سے نہ بدلو اور ان کے مال اپنے مال کے ساتھ ملا کر نہ کھا جاؤ یہ بڑا گناہ ہے۔

-4-باہم عزتوں کا احترام کریں اور معاشرے کی بنیادی اکائی یعنی نکاح کی حُرمت اور تقدس کا خیال رکھا جائے، اللہ کی مقرر کردہ حدود کی پاسداری کی جائے

-سورۃ النساء/ آیت13/ تِلْكَ حُدُودُ اللَّهِ ۚ وَمَن يُطِعِ اللَّهَ وَرَسُولَهُ يُدْخِلْهُ جَنَّاتٍ تَجْرِي مِن تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ خَالِدِينَ فِيهَا ۚ وَذَ‌ٰلِكَ الْفَوْزُ الْعَظِيمُ/ یہ الله کی باندھی ہوئی حدیں ہیں اور جو شخص الله اور اس کے رسول کے حکم پر چلے اسے بہشتوں میں داخل کرے گا جن کے نیچے نہریں بہتی ہوں گی ان میں ہمیشہ رہیں گے اور یہی ہے بڑی کامیابی

-5-“جو ہو چکا سو ہو چکا ” کا اصول اپنائیں

-ایک بات سمجھادی گئی کہ اللہ اُن باتوں سے درگزر فرماتا ہے جو مخصوص حکم آنے سے پہلے سرزد ہوچکی ہیں ۔ اُن باتوں پر گرفت نہ ہوگی چنانچہ ایک مسلمان کو بھی پرانی اور گزری باتوں سے درگزر کرنا چاہیئے۔ اپنے دل میں بہت پرانے گِلے شکوے اور شکایتیں جمع نہیں رکھنی چاہیئں۔ یہ زیادہ آسانی دینے والی بات ہے۔

-سورۃ النساء/ آیت23/ ( – – – ) إِلَّا مَا قَدْ سَلَفَ ۗ إِنَّ اللَّهَ كَانَ غَفُورًا رَّحِيمًا/مگر جو پہلے ہو چکا بے شک الله بخشنے والا مہربان ہے

Chapter 4:
1. The believers of Allah must be united.
Belief on Allah is the main unifying force for the believers.
Quran says: Aal e Imran/ 102,103/ O you who believe! be careful of (your duty to) Allah with the care which is due to Him, and do not die unless you are Muslims. And hold fast, all of you together, to the Rope of Allah (i.e. this Qur’an), and be not divided among yourselves
2. A Muslim must be promoting good deed, and must be stopping, denying and discouraging the evil and bad deeds.
Quran says: Aal e Imran/ 104/And from among you there should be a party who invite to good and enjoin what is right and forbid the wrong, and these it is that shall be successful.
3. Taking very good care of orphans.
If an orphan is under some one’s custody, there by the custodian have to be fair in handing over the inherited money of that orphan.
Quran says: Al nisa/ 2/ And give unto orphans their property and do not exchange (your) bad things for (their) good ones; and devour not their substance (by adding it) to your substance. Surely, this is a great sin.
4. Mutual respect and honour for relations and social ties, is guided through many laws and codes.
Quran says: Al Nisa/ 13/ Those are limits set by Allah: those who obey Allah and His Messenger will be admitted to Gardens with rivers flowing beneath, to abide therein (for ever) and that will be the supreme achievement
5. Adopting the habit of “letting it go”
Quran tells us: Al nisa/23/ except what hath already happened (of that nature) in the past. Lo! Allah is ever Forgiving, Merciful.

2 thoughts on “4th Part/ A Glimpse of Character Sketch by Qura’an

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s