14th Part, A Character sketch by Al Quran

قُرآنِ پاک میں بیان کردہ شخصی اوصاف میں سے چند ایک ، اختصار کے ساتھ

A little effort to put down some good qualities of a character, described by the Holy Qura’an.

-پارہ 14:

-1-سلامتی اور دلوں سے کدورت کا نکل جانا بہت نعمت کی بات ہے اور یہ کامیابی کی نشانی ہے۔ کامیاب لوگ اِس نعمت سے نوازے جائیں گے۔

-القرآن/ الحجر/ 46/47

-ادْخُلُوهَا بِسَلَامٍ آمِنِينَ۔وَنَزَعْنَا مَا فِي صُدُورِهِم مِّنْ غِلٍّ إِخْوَانًا عَلَىٰ سُرُرٍ مُّتَقَابِلِينَ۔

-ترجمہ: ان باغوں میں سلامتی اور امن سے جا کر رہو۔اور ان کے دلوں میں جو کینہ تھا ہم وہ سب دور کر دیں گے سب بھائی بھائی ہوں گے تختوں پر آمنے سامنے بیٹھنے والے ہوں گے۔

-2- لوگوں کی باتوں پہ ضیقِ صدر ہونا برحق ہے، ایسے میں اللہ کی تسبیح اور نماز سے مدد لینا پیغمبروں کا شیوہ ہے۔

-القرآن/الحجر/97/98/99/

-وَلَقَدْ نَعْلَمُ أَنَّكَ يَضِيقُ صَدْرُكَ بِمَا يَقُولُونَ۔فَسَبِّحْ بِحَمْدِ رَبِّكَ وَكُن مِّنَ السَّاجِدِينَ۔وَاعْبُدْ رَبَّكَ حَتَّىٰ يَأْتِيَكَ الْيَقِينُ۔

-ترجمہ: اور ہم جانتے ہیں کہ تیرا دل ان باتوں سے تنگ ہوتا ہے جو وہ کہتے ہیں۔سو تو اپنے رب کی تسبیح حمد کے ساتھ کیے جا اور سجدہ کرنے والوں میں سے ہو۔اور اپنے رب کی عبادت کرتے رہو یہاں تک کہ تمہیں موت آجائے۔

-3-اللہ کی دی گئی نعمتوں سے فضل اور رزق تلاش کرنا اور اللہ ہی کا شکرگزار ہونا چاہئیے

-القرآن/النحل/14/15/16/17/18/

-وَهُوَ الَّذِي سَخَّرَ الْبَحْرَ لِتَأْكُلُوا مِنْهُ لَحْمًا طَرِيًّا وَتَسْتَخْرِجُوا مِنْهُ حِلْيَةً تَلْبَسُونَهَا وَتَرَى الْفُلْكَ مَوَاخِرَ فِيهِ وَلِتَبْتَغُوا مِن فَضْلِهِ وَلَعَلَّكُمْ تَشْكُرُونَ

-وَأَلْقَىٰ فِي الْأَرْضِ رَوَاسِيَ أَن تَمِيدَ بِكُمْ وَأَنْهَارًا وَسُبُلًا لَّعَلَّكُمْ تَهْتَدُونَ

-وَعَلَامَاتٍ ۚ وَبِالنَّجْمِ هُمْ يَهْتَدُونَ

-أَفَمَن يَخْلُقُ كَمَن لَّا يَخْلُقُ ۗ أَفَلَا تَذَكَّرُونَ

-وَإِن تَعُدُّوا نِعْمَةَ اللَّهِ لَا تُحْصُوهَا ۗ إِنَّ اللَّهَ لَغَفُورٌ رَّحِيمٌ

-ترجمہ: اور وہ وہی ہے جس نے دریا کو کام میں لگا دیا کہ اس میں تازہ گوشت کھاؤ اور اسی سے زیور نکالو جسے تم پہنتے ہو اور تو اس میں جہازوں کو دیکھتا ہے کہ پانی کو چیرتے ہوئے چلے جاتے ہیں اور تاکہ تم اس کے فضل کو تلاش کرو اور تاکہ تم شکر کرو

-اور زمین پر پہاڑوں کے بوجھ ڈال دیے تاکہ تمہیں لے کر نہ ڈگمگائے اور تمہارے لیے نہریں اور راستے بنا دیے تاکہ تم راہ پاؤ

-اور نشانیاں بنائیں اور ستاروں سے لوگ راہ پاتے ہیں

-پھر کیا جو شخص پیدا کرے اس کے برابر ہے جو کچھ بھی پیدا نہ کرے کیا تم سوچتے نہیں

-اور اگر تم الله کی نعمتو ں کو گننے لگو تو ان کا شمار نہیں کر سکو گےبے شک الله بخشنے والا مہربان ہے

-4- عدل، احسان، قرابت داروں سے اچھائی کریں اور بےحیائی، منکر اور تکبر سے باز رہنے کا حکم دیتے رہیں۔

-القرآن/النحل/90

-إِنَّ اللَّهَ يَأْمُرُ بِالْعَدْلِ وَالْإِحْسَانِ وَإِيتَاءِ ذِي الْقُرْبَىٰ وَيَنْهَىٰ عَنِ الْفَحْشَاءِ وَالْمُنكَرِ وَالْبَغْيِ ۚ يَعِظُكُمْ لَعَلَّكُمْ تَذَكَّرُونَ

-ترجمہ: بے شک الله انصاف کرنے کا اوربھلائی کرنے کا اور رشتہ داروں کو دینے کا حکم کرتا ہے اوربے حیائی اوربری بات اور ظلم سے منع کرتا ہے تمہیں سمجھاتا ہے تاکہ تم سمجھو

-5-حکمت اور اچھے طریقے سے اللہ کے راستے کی طرف بلایا جائے، جب بحث یا اختلاف ہو تو احسن طریقہ اپنایا جائے۔

-القرآن/النحل/125

-ادْعُ إِلَىٰ سَبِيلِ رَبِّكَ بِالْحِكْمَةِ وَالْمَوْعِظَةِ الْحَسَنَةِ ۖ وَجَادِلْهُم بِالَّتِي هِيَ أَحْسَنُ ۚ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ أَعْلَمُ بِمَن ضَلَّ عَن سَبِيلِهِ ۖ وَهُوَ أَعْلَمُ بِالْمُهْتَدِينَ

-ترجمہ: اپنے رب کے راستے کی طرف دانشمندی اور عمدہ نصیحت سے بلا اور ان سے پسندیدہ طریقہ سے بحث کر بے شک تیرا رب خوب جانتا ہے کہ کون اس کے راستہ سے بھٹکا ہوا ہے اور ہدایت یافتہ کو بھی خوب جانتا ہے

Part 14:
1-It is a blessing to be safe and free of bitterness, and only the successful will be blessed with these qualities.
-AL Quran/alhijr/46/47/ (It will be said to them): ‘Enter therein (Paradise), in peace and security. And we shall remove from their breasts any deep feeling of bitterness (that they may have). (So they will be like) brothers facing each other on thrones.

2-It is completely natural to get sad on negative talk of people and one should seek help in prayer and Allah’s zikr.
-Al Quran/alhijr/97/98/99/We do indeed know how thy heart is distressed at what they say. But hymn the praise of thy Lord, and be of those who make prostration (unto Him). And serve thy Lord till the inevitable cometh unto thee.

3-Allah’s blessings are countless, in the whole universe and Allah is the merciful.
-Al Quran/alnahal/14/15/16/17/18/
-And He it is Who has subjected the sea (to you), that you eat thereof fresh tender meat (i.e. fish), and that you bring forth out of it ornaments to wear. And you see the ships ploughing through it, that you may seek (thus) of His Bounty (by transporting the goods from place to place) and that you may be grateful.
-And He has affixed into the Earth Mountains standing firm, lest it should shake with you; and rivers and roads, that you may guide yourselves.
-And landmarks (signposts during the day) and by the stars (during the night), they (mankind) guide themselves.
-Is then He, Who creates as one who creates not? Will you not then remember?
-And if you would count the favours of Allah, never could you be able to count them. Truly! Allah is Oft-Forgiving, Most Merciful.

4-Being good to relatives, justice and kindness, and stopping from shameful deeds, injustice and rebellion is ordered by Allah.
-Al Quran/alnahal/90/Surely Allah enjoins the doing of justice and thedoing of good (to others) and the giving to the kindred, and He forbids indecency and evil and rebellion; He admonishes you that you may be mindful.5-One must use wisdom and beautiful preaching to place invitation to the way of Allah.-Al Quran/alnahal/125/Invite (all) to the Way of thy Lord with wisdom and beautiful preaching; and argue with them in ways that are best and most gracious: for thy Lord knoweth best, who have strayed from His Path, and who receive guidance.

Advertisements

Part 13, Qualities of a character by the Holy Quran

قُرآنِ پاک میں بیان کردہ شخصی اوصاف میں سے چند ایک ، اختصار کے ساتھ

A little effort to put down some good qualities of a character, described by the Holy Qura’an.

-پارہ 13:

-1-اللہ کی خلقت میں غور و فکر کرنا

-القرآن/الرعد/3

-وَهُوَ الَّذِي مَدَّ الْأَرْضَ وَجَعَلَ فِيهَا رَوَاسِيَ وَأَنْهَارًا ۖ وَمِن كُلِّ الثَّمَرَاتِ جَعَلَ فِيهَا زَوْجَيْنِ اثْنَيْنِ ۖ يُغْشِي اللَّيْلَ النَّهَارَ ۚ إِنَّ فِي ذَ‌ٰلِكَ لَآيَاتٍ لِّقَوْمٍ يَتَفَكَّرُونَ

-ترجمہ: اور اسی نے زمین کو پھیلایا اور اس میں پہاڑاور دریا بنائے اور زمین میں ہر ایک پھل دوقسم کا بنایا دن کو رات سے چھپا دیتا ہے بے شک اس میں سوچنے والوں کے لیے نشانیاں ہیں

-2- ذکر اللہ سے دل کو اطمئنان ہونا

-القرآن/الرعد/28

– الَّذِينَ آمَنُوا وَتَطْمَئِنُّ قُلُوبُهُم بِذِكْرِ اللَّهِ ۗ أَلَا بِذِكْرِ اللَّهِ تَطْمَئِنُّ الْقُلُوبُ

-ترجمہ: وہ لوگ جو ایمان لائے اور ان کے دلوں کو الله کی یاد سے تسکین ہوتی ہے خبردار! الله کی یاد ہی سے دل تسکین پاتے ہیں

-3- اچھی بات کرنا ، ترغیب دلائی گئی کہ اچھی بات کے ظاہری اور باطنی ثمرات بڑھتے رہتے ہیں۔

-القرآن/ابراہیم/24/25

– أَلَمْ تَرَ كَيْفَ ضَرَبَ اللَّهُ مَثَلًا كَلِمَةً طَيِّبَةً كَشَجَرَةٍ طَيِّبَةٍ أَصْلُهَا ثَابِتٌ وَفَرْعُهَا فِي السَّمَاءِ۔ تُؤْتِي أُكُلَهَا كُلَّ حِينٍ بِإِذْنِ رَبِّهَا ۗ وَيَضْرِبُ اللَّهُ الْأَمْثَالَ لِلنَّاسِ لَعَلَّهُمْ يَتَذَكَّرُونَ

-ترجمہ: کیاتو نےنہیں دیکھا کہ الله نے کلمہ پاک کی ایک مثال بیان کی ہے گویا وہ ایک پاک درخت ہے کہ جس کی جڑ مضبوط اور اس کی شاخ آسمان ہے۔وہ اپنے رب کے حکم سے ہر وقت اپنا پھل لاتا ہے اور الله لوگوں کے واسطے مثالیں بیان کرتا ہے تاکہ وہ سمجھیں۔

-4- مطلقاََ شکرگزاری اپنائی جائے کہ انسان اللہ کی نعمتوں کو شمار نہیں کرسکتا۔

-القرآن/ابراہیم/34

– وَآتَاكُم مِّن كُلِّ مَا سَأَلْتُمُوهُ ۚ وَإِن تَعُدُّوا نِعْمَتَ اللَّهِ لَا تُحْصُوهَا ۗ إِنَّ الْإِنسَانَ لَظَلُومٌ كَفَّارٌ

-ترجمہ: اور جو چیز تم نے ان سے مانگی اس نے تمہیں دی اور اگر الله کی نعمتیں شمار کرنے لگو تو انہیں شمار نہ کر سکو بے شک انسان بڑا بےانصاف اور ناشکرا ہے

Part 13:

  1. Critically thinking in Allah’s creatures and nature and how the system of universer is working.
    -Quarn: Ra’ad/3/ And it is He who spread out the earth, and set thereon mountains standing firm and (flowing) rivers: and fruit of every kind He made in pairs, two and two: He draweth the night as a veil o’er the Day. Behold, verily in these things there are signs for those who consider!

2- Remembering Allah comforts one’s heart.
-Quran: Ra’ad/28/ “Those who believe, and whose hearts find satisfaction in the remembrance of Allah: for without doubt in the remembrance of Allah do hearts find satisfaction.

3- Always being positive and righteous brings many fruits spiritually and apparently.
-Quran: Ibrahim/24/25/Have you not considered how Allah sets forth a parable of a good word (being) like a good tree, whose root is firm and whose branches are in heaven, yielding its fruit in every season by the permission of its Lord? And Allah sets forth parables for men that they may be mindful.

4- One must adopt gratitude because there are countless blessings on the human.
-Quran: Ibrahim/34/And He gives you of all that you ask Him; and if you count Allah’s favors, you will not be able to number them; most surely man is very unjust, very ungrateful.

12th part, character glimpse by Quran

قُرآنِ پاک میں بیان کردہ شخصی اوصاف میں سے چند ایک ، اختصار کے ساتھ

A little effort to put down some good qualities of a character, described by the Holy Qura’an.

Part: 12

پارہ 12:

-1ـ سابقہ اقوام ِ عالم کے حالات سے سبق حاصل کرنا

-ہود/100/103

– ذَ‌ٰلِكَ مِنْ أَنبَاءِ الْقُرَىٰ نَقُصُّهُ عَلَيْكَ ۖ مِنْهَا قَائِمٌ وَحَصِيدٌ

-ترجمہ: یہ بستیوں کے تھوڑے سے حالات ہیں کہ تجھے سنا رہے ہیں ان میں سے کچھ تو اب تک باقی ہیں اورکچھ اجڑی پڑی ہیں۔

إِنَّ فِي ذَ‌ٰلِكَ لَآيَةً لِّمَنْ خَافَ عَذَابَ الْآخِرَةِ ۚ ذَ‌ٰلِكَ يَوْمٌ مَّجْمُوعٌ لَّهُ النَّاسُ وَذَ‌ٰلِكَ يَوْمٌ مَّشْهُودٌ

– اس بات میں نشانی ہے اس کے لیے جو آخرت کے عذاب سے ڈرتا ہے یہ ایک ایسا دن ہوگا جس میں سب لوگ جمع ہوں گے اور یہی دن ہے جس میں سب حاضر کیے جائیں گے

-2-دن کے اطراف میں نماز ادا کرنا اور صبر پہ قائم رہنا

-ہود /114/115

– وَأَقِمِ الصَّلَاةَ طَرَفَيِ النَّهَارِ وَزُلَفًا مِّنَ اللَّيْلِ ۚ إِنَّ الْحَسَنَاتِ يُذْهِبْنَ السَّيِّئَاتِ ۚ ذَ‌ٰلِكَ ذِكْرَىٰ لِلذَّاكِرِينَ
– وَاصْبِرْ فَإِنَّ اللَّهَ لَا يُضِيعُ أَجْرَ الْمُحْسِنِينَ

-ترجمہ: اور دن کے دونو ں طرف اورکچھ حصہ رات کا نماز قائم کر بے شک نیکیاں برائیوں کو دور کرتی ہیں یہ نصیحت حاصل کرنے والوں کے لیے نصیحت ہے

– اور صبر کر بے شک الله نیکی کرنے والوں کا اجر ضائع نہیں کرتا

-3- احتیاط کا تقاضا ہے کہ انسان اپنی کامیابیوں اور نعمتوں کی تشہیر نہ کرے تاکہ شیطان کو بدخواہ لوگوں میں حسد پیدا کرنے کا موقعہ نہ ملے۔

-یوسف/5

– قَالَ يَا بُنَيَّ لَا تَقْصُصْ رُؤْيَاكَ عَلَىٰ إِخْوَتِكَ فَيَكِيدُوا لَكَ كَيْدًا ۖ إِنَّ الشَّيْطَانَ لِلْإِنسَانِ عَدُوٌّ مُّبِينٌ

-ترجمہ: کہا اے بیٹا اپنا خواب بھائیوں کے سامنے بیان مت کرنا وہ تیرے لیے کوئی نہ کوئی فریب بنا دیں گے شیطان انسان کا صریح دشمن ہے

  1. Knowing the history and events from past leads one to be wise and careful.
    -Quran/Hood/100/103

– These are some of the stories of communities which We relate unto thee: of them some are standing, and some have been mown down (by the sickle of time).
– Indeed in that (there) is a sure lesson for those who fear the torment of the Hereafter. That is a Day whereon mankind will be gathered together, and that is a Day when all (the dwellers of the heavens and the earth) will be present.

2.Being consistent and stay punctual while offering prayers at various times.
-Quran/Hood/114/115
– And establish regular prayers at the two ends of the day and at the approaches of the night: For those things, that are good remove those that are evil: Be that the word of remembrance to those who remember (their Lord):
– And be patient; verily, Allah wastes not the reward of the good-doers.

  1. One should not show off his/her blessings and fortune so that bad wishers may not get a chance to be jealous by Satan.
    -Quran/Yusuf/5

    • He (the father) said: “O my son! Relate not your vision to your brothers, lest they should arrange a plot against you. Verily! Shaitan (Satan) is to man an open enemy!