The End of Monk’s Tale – 40

اپریل کا مہینہ ہے جس میں اُنتیس زائرین کینٹربری کے بڑے کلیسا کی جانب مذہبی زیارت کے لئے رواں دواں ہیں اور چودہویں صدی کے سفر کی صعوبت کے پیشِ نظر ، اِن مسافروں نے باہم کہانیاں سناکر وقت گزاری کا منصوبہ بنایا۔ سفر کی مشکلات سے نبرد آزما ہونے کے علاوہ، کہانی سنانے کا فن ، کم از کم اُتنا ہی پرانا ہے جس قدر پرانا خود انسان ہے۔ کہانی سناکر، کہانی سُن کر اور نسل در نسل کہانی منتقل کرکے ہی روایات کا ایک بڑا حصہ ارتقائی منازل طے کرتا ہوا آج کی موجودہ شکل تک پہنچا ہے۔ کلاسیکی سٹیج ڈرامے، فلم سازی، جدید دور کا ڈرامہ، تھری ڈی ، اینیمیٹیڈ اور تاریخی فلمیں، سب کہانی کاری کے پہلو سے ہی نمودار ہونے والی اصناف ہیں۔

اب ایسا ہوا کہ جب میزبان نے مونک سے کہانی کی فرمائش کی تو مونک نے اُس چلن سے ہٹ کر کہانی سنائی جو کہ پہلے سے مسافروں میں چل رہا تھا۔ مونک نے اپنے منصب کے اعتبار سے ، اپنی علمی لیاقت کی غمازی کرتے ہوئے، دیومالائی، تاریخِ قبل مسیح اور ماضی قریب کی چند شخصیات کا حال سنایا ۔

The monk says: I will lament, then, in the manner of tragedy, the suffering of those who once enjoyed a high status in this world and then fell from grace in such a dreadful way that there was no hope of them ever recovering from it. Certainly, when fortune flies from us, no one has the power to alter her course. So let no man feel secure in his prosperity. Draw caution from these old and true stories

.

اِن سب شخصیات کے چُناؤ میں یہ بات مماثل تھی کہ یہ سب کردار بدترین انجام سے دوچار ہوئے ۔ زندگی میں، کسی نہ کسی سبب انہوں نے عروج پایا لیکن اپنی خطا یا قسمت کے پھیر کی وجہ سے زوال کا سامنا کیا ، دردناک موت دیکھی، بےبسی اور ذلّت اِن کا مقدّر ہوئی۔

اِن کرداروں میں سے بیشتر کا ماخذ بائبل ہے اور چونکہ مونک خود ایک کلیسائی کردار ہے تو ظاہری بات ہے کہ اُس کی علمی مہارت کا شعبہ یہی تھا۔ مونک نے لوسیفر، آدم، ہرکولیئس، سیمپسن، بخت نصر، بیلشضر ، ہولوفرنو، کریسص، سکندرِ اعظم، ملکہ زینوبیا، انطیوخوس، جولئیس سیزر، نیرو، ہوگولینو، بارنابو وِزکونٹی، پیٹر آف قبرص اور پیٹر آف قشتالہ کی المناک رودادیں سنائی۔

The monk tells a series of tragic falls and claims to have a hundred of these stories but the Knight stops him after only seventeen, saying that they have had enough sadness and depression. In all these stories, noble figures are brought low and experience a fall from grace. The Knight finds his listing of historical tragedies monotonous and depressing

کل سترہ ٹریجیڈی احوال سنانے کے بعد ، نائٹ نے مونک کو ٹوکنا مناسب سمجھا کیونکہ پے در پے زوال ، ہزیمت اور موت کے تذکرے سُن سُن کر تمام زائرین یاسیت کا شکار ہونے لگے تھے۔دل ڈوبنے لگے تھے اور اُن کے چہروں سے ہبوطِ نفس اور ہیبت عیاں تھی۔ میزبان نے بھی، مونک کی بات کی تائید کی اور اِن تاریخی المیوں کو روک دینے میں ہی عافیت جانی۔

Here the Knight “stynteth” (stops) the monk’s tale

نائٹ نے کہا کہ یوں تو تاریخی واقعات میں عبرتِ عالم ہوتی ہے اور زوال پذیر ہونے والے افراد کا حال جان کر انسان سبق اور تجربہ حاصل کرتا ہے مگر اب یہ سلسلہ روک دینا اچھا ہے کہ ماحول بہت بوجھل اور سوگوار ہوچلا ۔

The Canterbury Pilgrims

ہونے کو تو یہ اتفاقیہ بات بھی ہوسکتی ہے کہ نائٹ ہی وہ شخص ٹھہرا جس نے مونک کو الم و غم بھرے حالات سنانے سے روکا۔ لیکن ، کہانیوں کے آغاز میں ، نائٹ کا جو شخصی خاکہ پیش کیا گیا ہے اُس کے مطابق تاریخ، تخت اور مبارزت سے متعلق واقعات نائٹ کی دلچسپی کا محور ہوتے . . . اور یہاں نائٹ ہی اُکتاہٹ کا شکار ہوا۔

ماہرینِ ادب نے کڑی سے کڑی ملا کر ، اِس بات کی یہ توجیہہ پیش کی ہے کہ نائٹ کے تعارف میں یہ بات بتائی گئی ہے کہ وہ بہت سے صلیبی معرکوں میں اپنے جوہر دکھا چکا ہے جن میں سکندریہ پر حملے کی جنگی مہم کا ذکر تھا ۔ چنانچہ اگر وہ سکندریہ پر لشکر کشی کرنے والے صلیبی دستے میں شامل تھا تو یہ وہی صلیبی جنگ ہوئی جس کی کمان قبرص/سائپرس کا پیٹر اوّل کررہا تھا۔

یہی بات ہے کہ نائٹ اپنے سابقہ آرمی چیف کا المیہ سُن کر دلبرداشتہ ہوگیا، اپنے سپہ سالار کے لئے ایسا محسوس کرنا بالکل فطری تھا ، اُس سے رہا نہ گیا اور وہ بول پڑا۔ یوں مونک کی المیہ داستانوں کا سلسلہ سترہ سے آگے نہ بڑھ سکا۔ سترہ شہرہ آفاق شخصیات کے مؤلم انجام کے بعد مونک خاموش ہوا اور میزبان نے قافلے میں شامل ایک پریسٹ سے درخواست کی کہ اگلی کہانی وہ سنائے۔

‘Ho!’ quod the knight, ‘good sir, namore of this, that ye han seyd is right y-nough, y-wis, and mochel more…

‘Hey!’ exclaimed the knight. ‘Good sir, no more of this! What you have said is quite enough – in fact, I would say, too much! A small amount of seriousness is enough for most people. For myself, I think it’s a great shame when someone who’s enjoyed wealth and comfort loses it all suddenly. It’s a huge pleasure to hear of its opposite, in fact. If a man who has been poor betters himself and climbs up the social ladder, has some good luck and ends up living in prosperity – a thing like this is a pleasure to hear, to my way of thinking, and makes for a much better tale.’
‘I totally agree!’ exclaimed our host. ‘By the bell of Saint Paul’s, you’re right! This monk chimes on and on about “fortune overshadowed by a cloud” or some other crap
‘Sir Monk, may God bless you, but no more of this. Your tale is annoying us. Such talk is not worth a butterfly. There is no pleasure to be gained from it. Therefore Sir Monk, Sir Peter rather, I plead with you, tell us about something else. If it wasn’t for the clinking of all the bells hanging from your bridle
‘No,’ replied the monk. ‘I can’t be bothered any more. Let someone else have their go, for I have finished.’
‘Come here then, Sir Priest, come over here Sir John,’ said the host to one of the Nuns’ Priests, rather roughly and insistently. ‘Tell us something that will make us laugh. Be upbeat, although I can see you’re riding an old nag; but so what if your horse is mangy and thin? If he serves your purpose, he’s good enough, so be in good spirits.’
‘Yes, sir,’ replied the Nun’s Priest. ‘Yes, host, I will be merry, may good luck come to me, or else I will annoy you all, I understand this.’
Then he began his tale and spoke out to everybody, this sweet priest, Sir John.

The monk mourns Pedro of Castile – 39

چاوسر کی کینٹربری کہانیاں جاری ہیں ، مونک کی باری ہے اور مونک تاریخی مشاہیر کے زوال کی حکایات سنارہا ہے۔ سولہ رودادیں سنائی جا چکی ہیں اور سترہویں اب پیشِ خدمت ہے۔ آخری دو شخصیات چودہویں صدی سے تعلق رکھتی ہیں اور تقریباََ سبھی مسافرین اِن ناموں سے مانوس ہیں۔

سولہواں ماجرا، مونک نے تیرھویں صدی میں ، تخت و تاج پر متمکن رہنے والے ، سائپرس کے بادشاہ پیٹر اوّل کا ، سُنایا جو دنیا میں ایک نامور حکمران تھا مگر موت آئی تو اپنے ہی تین افسروں یعنی نائٹز نے اُسے اُس کے اپنے ہی محل کی خوابگاہ میں قتل کردیا۔ گویا تاج وری نے وہ دن دکھایا کہ اپنی آرام گاہ ہی مقتل ٹھہری۔

سترہواں ماجرا مونک نے ایک سفاک بادشاہ کا سنایا جس کا تذکرہ تاریخ دانوں نے کافی تفصیل میں کیا ہے۔ اور کئی متضاد روایات بھی ملتی ہیں۔ اس ضمن میں جو معلومات ملیں وہ قدرے طویل ہیں ۔ شاید دلچسپ اور عبرت ناک بھی۔

- پیڈرو آف کیسٹائل:

De Petro Rege Ispannie

قشتالہ کا بادشاہ پیڈرو(1334-1369)

سپین کی ریاست قشتالہ اور لیون کا بادشاہ جو ظالم پیڈرو کے نام سے مشہور ہوا۔ گیارہویں الفانسو آف قشتالہ اور اُس کی قانونی ملکہ ماریا آف پرتگال کا بیٹا تھا جس نے شیطانی بےرحمی میں نام کمایا ۔ اگرچہ اُس کے مرنے کے بعد اُس کے حمایتی طبقے نے اُسے ‘عادل پیڈرو’ کے لقب سے مشہور کرنے کی کوشش کی لیکن پھر بھی وہ ظالم پیڈرو یا پیٹر ہی کے نام سے تاریخ کے صفحات میں جانا جاتا ہے۔

Pedro of Castile

Pedro of Castile

O noble Pedro, glory once of Spain
Whom Fortune held so high in majesty
Well ought men read thy piteous death with pain
Out of thy land thy brother made thee flee
Chaucer, The Canterbury Tales

King Peter of Spain

Oh worthy Pedro, the glory of Spain, whom fortune held in such high majesty! Well might men lament your piteous death. Your brother made you flee from your land, then you were betrayed during a siege and led into his tent where he killed you. All your lands and taxes were now his. A rogue tricked you, as a hunter sets a branch that is coated with lime

سپین کا علاقہ مسلمان سپہ سالار طارق بن زیاد نے 19جولائی711 میں عیسائی بادشاہ راڈرک یا روڈریگو کو شکست دے کر حاصل کیا تھا۔ اس جگہ کا نام جرمن قوم وانڈلز(Vandalus) کی نسبت سے واندلس اور پھر اندلُس کہلایا اور بہت سی سیاسی خونی جنگوں کا میدان بنا۔

ظالم پیڈرو نے 1350سے1369تک حکومت کی باگ ڈور سنبھالی۔ کم سنی میں تعلیم کے ساتھ ساتھ مصوّری، شاعری اور موسیقی سیکھی۔نیلی آنکھوں ، پیلے بالوں اور ہکلا کر بولنے والا پیڈرو، سولہ سال کی عمر میں تخت نشین ہوا اور باقی کی تمام عمر قتل و غارت اور خونریز معرکوں میں گزری جہاں اُس کا سامنا تخت کے دعویدار، اپنے ہی دس غیر قانونی سوتیلے بھائیوں سے تھا جن میں سے دو کا ذکر تاریخ میں زیادہ آتا ہے۔ یہ اولادیں اُس کے باپ الفانسو کی ایک منظورِ نظر ‘ایلینور’Eleanor سے تھیں۔

506-Castile_1210

اِن خونی معرکوں میں فرانس، انگلستان اور پُرتگال کے شاہی خاندانوں کے فوجی دستے بھی ، اُسی اعتبار سے شامل ہوتے جیسے جیسے اُن کے مفادات یا وفاداریاں ہوتیں ۔ کیونکہ قشتالہ کے تخت نشین خاندان سے انگلستان کے آرگون خاندان کی کانٹے دار رشتہ داری اور اقتدار میں شراکت تھی۔

پیڈرو کے نزدیک حزبِ اختلاف میں ہونا دھوکہ دہی اور ظلم کے مترادف تھا۔ شکّی مزاج بادشاہ سے مصالحت کرنا انتہائی خطرناک ثابت ہوتا، اشرافیہ میں سے جب کسی کو گمان ہوتا کہ بادشاہ سے صلح ہوگئی ہے تبھی اُسے قتل کروادیا جاتا ۔ اِسی کے عہد میں . . . دس سال تک بادشاہ کے مصاحبوں میں شامل رہنے والے ایک مقرّب کا سر قلم کروایا گیا تو مرنے والے نے اپنے آخری خط میں بادشاہ کو مخاطب کر کے لکھا کہ: ” موت کی اِس آخری گھڑی میں تمھارے لئے میرا صاف سچا مشورہ یہ ہے کہ تباہی سے بچنے کے لئے اپنا خونی خنجر ایک طرف رکھ دو ورنہ بدترین انجام تمھارا نصیب ہوگا ۔”

Retrato de Pedro I of castile

Retrato de Pedro I of castile

جدید ماہرینِ نفسیات پیڈرو کو نفسیاتی واہموں اور عدم تحفظ کے وسوسے کا شکار ٹھہراتے ہیں جو ہم نسل کُش اور قاتلانہ رحجان کا مالک تھا۔ جب پیڈرو کا باپ الفانسو یازدہم ایک بیماری سے مرا تو اُس کی تدفین سے پہلے ہی پیڈرو کے غیر قانونی سوتیلے بھائی اور اُن کی ماں فرار ہو کر روپوش ہوچکے تھے۔ تخت نشین ہوتے ہی اُس نے اپنے باپ کی منظورِ نظر کو قتل کروایا اور بعد ازاں سوتیلے بھائیوں فریڈریک اور ہنریک کے درپے رہا۔

فرانس کے ساتھ سیاسی استحکام کے پیشِ نظر ، پیڈرو کی شادی اُٗس کی ماں کی خواہش پہ ایک فرانسیسی شہزادی بلانچی،Blanche سے ہوئی لیکن دو دن بعد ہی بادشاہ اپنی محبوبہ اور خفیہ بیوی ماریا آف پڈیلاMaria of Padilla کے ہاں چلا آیا جس پر فرانس کے شاہی افراد اور پوپ سے متعلق حلقے سخت برہم ہوئے اور بدمزگی پھیل گئی ، چار دن بعد پیڈرو نے بلانچی کو قید کروادیا جہاں وہ قتل کروادی گئی۔ مؤرخین کا کہنا ہے کہ پیڈرو کو بےوفائی کی فطرت اپنے والد کی طرف سے ملی تھی لیکن الفانسو یازدہم نے اپنی بیوی کو قید یا قتل نہیں کروایا تھا ۔ پیٹر نے یقینی طور پر بلانچی آف بوربون کو قید کروایا تھا چنانچہ غالب گمان ہے کہ قتل بھی اُسی نے کروایا ہوگا۔ پیڈرو کے پاس دعویٰ کرنے کو ماریا آف پڈیلا کی طوفانی محبت کا عذر بھی نہیں تھا کیونکہ اُس نے ماریا سے اپنے تعلق کا انکار کرکے ہی فرانس کی بلانچی سے شادی کی تھی، اس کے علاوہ ماریا سے بےوفائی کا مرتکب ہوکر ، کاسترو خاندان کی ایک عورت سےبھی اُس کا ایک غیرقانونی بیٹا تھا۔ تاہم ماریا آف پڈیلا اُس کے حرم کی وہ واحد عورت تھی جس سے اُس کا دل کبھی نہیں اُکتایا ۔

پیڈرو کے جنگی جنون نے اُسے زیادہ سے زیادہ رقبے کو اپنی مملکت میں شامل کرنے پر اُکسایا، اور 1356سے1375تک جاری رہنے والی طویل جنگ ہوئی جسے دو پیٹروں کی جنگ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ جو کہ تاجِ قشتالہ اور تاجِ آرگون کے مابین ہوئی جس میں پیٹر آف قشتالہ اور پیٹر آف آرگون مدِّ مقابل تھے۔

Capture

قشتالہ کا پیڈرو یا پیٹر ، ویلنشیا کی ریاست کو زیرِ نگین کرنا چاہتا تھا جس میں مرسیہ، الِش، الیکانتی اور اوریویلا کے شہر شامل تھے۔ سپین میں نہر شقورہ یا سفید نہر کے کنارے مُرسیہ کا شہر825میں قرطبہ کے امیر عبدالرحمٰن الداخل نے آباد کیا اور نہر شقورہ سے نکالی گئی نہروں پر مبنی ایک شاندار نظامِ آبپاشی قائم کیا جس سے شہر کی زراعت نے بےحد ترقی کی۔ گرتی اُبھرتی مسلم حکومتوں میں مُرسیہ کی ترقی جاری رہی یہاں تک کہ1266 میں جیمز اوّل آف آرگون نے مُرسیہ کو عیسائی قلمرو میں شامل کر لیا ۔

Murcia

Murcia


Entrance of James 1 in Murcia 1266

Entrance of James 1 in Murcia 1266

پیڈرو کا سوتیلا بھائی ہنریکEnrique, Henrique, Fedrique,، پیڈرو کو ‘یہودیوں کا بادشاہ’ مشہور کروانے میں کامیاب ہوگیا تھا اور قشتالہ کی یہودی مخالف آبادی میں ایسا کرنا اُس کے سیاسی مفاد میں ثابت ہوا تھا۔ اسی نے منظم قتلِ عام اور جبری تنصیری تحریکوں کی سرپرستی کی۔ جس کے بدلے میں پیڈرو نے ان تحریکوں کے سرکردہ یہودی مخالف افراد کو قتل کروایا۔ یہ ایسا زمانہ تھا جب صلیبی جنگوں کی فضا پورے یورپ پہ چھائی ہوئی تھی اور اسی سبب لوگوں میں عیسائی شعور اُجاگر کرنے کے لئے کلیسائی سرگرمیاں عروج پہ تھیں۔ سیاسی اور معاشرتی معاملات میں مذہبی تعصب نمایاں تھا۔ مسلمانوں کو بربر اور مُور کہا جاتا تھا۔

Palace-of-pedro-1

Palace-of-pedro-1

مؤرخ لکھتا ہے کہ . . . پیڈرو نے اشبیلیہ(Seville) کے محل میں اپنے سوتیلے بھائی فیڈریک کو کھانے پر مدعو کیا ۔ فیڈریک اپنے محافظوں کے ساتھ وہاں پہنچا تو اُسے خطرہ محسوس ہوا، وہ اُلٹے قدموں واپس جانے ہی لگا تھا کہ پیڈرو کے آدمی نے اُس کے سر میں گُرز دے مارا ، پیڈرو اُٹھا ور فیڈریک کے محافظوں کو خود قتل کیا ، کھانے کی میز پہ واپس پہنچا تو بھائی کو زندہ تڑپتے پایا ، ایک گارڈ کو اپنا خنجر دیا کہ فیڈریک کا کام تمام کردے۔ مؤرخ کے مطابق ، اِس کے بعد . . .پیڈرو نے وہیں کھانا کھایا جہاں سامنے اُس کے بھائی کی لاش پڑی ہوئی تھی۔

بہت سے معرکوں کے بعد ، ایک دفعہ میدانِ جنگ میں ہنری/ہنریک (Enrique ) کسی طرح پیڈرو کے خیمے میں داخل ہوگیا ۔ دونوں بھائی آمنے سامنے آئے جو کئی سالوں سے ایک دوسرے کے خلاف محاذآرائی کی تیاری کرتے رہے تھے۔ خیمے کے اندر کیا ہوا . . . اِس بارے میں کئی روایات ملتی ہیں۔ ایک روایت ہے کہ ہنریک کے ساتھی نے پکارا، یہ رہا تمھارا دشمن، چونکہ ہنریک نے عرصہء دراز سے پیڈرو کو نہیں دیکھا تھا اس لئے پہلی نظر میں پہچان نہ سکا ۔ پیڈرو نے جواباََ چلّا کر کہا : ہاں میں ہی ہوں، میں ہی ہوں۔

ایک دوسرے وقائع نگار کے مطابق، ہنریک یہ کہتا ہوا خیمے میں داخل ہوا کہ: کہاں ہے وہ یہودی طوائف کا بیٹا جو خود کو قشتالہ کا بادشاہ کہتا ہے۔پیڈرو نے جواب دیا کہ : تم ہو ایک کم ذات عورت کی اولاد جبکہ میں تو بادشاہ الفانسو کا بیٹا ہوں۔ دونوں نے ہتھیار تان لئے اور کچھ دیر بعد دونوں زمین پر گتھم گتھا تھے جبکہ قشتالہ کے تخت کی قسمت کا فیصلہ ہونے کو تھا۔ ہنریک کا خنجر پیڈرو کے سینے میں گہرائی تک اُتر چکا تھا اور اُس کی لاش اپنے ہی بھائی کے قدموں میں پڑی تھی۔

Pedro_Castile_beheading

Pedro_Castile_beheading


War of Peter the Cruel in Castile

بالآخر1369میں پیڈرو اپنے سوتیلے بھائی ہنریک کے ہاتھوں قتل ہوا جس نے اپنے آدمیوں کو مردہ پیڈرو کا سر قلم کرنے کا حکم دیا ۔ انتقام کے طور پر تین دن اُس کا سر بُریدہ جسم بے گور و کفن خیمے کے باہر لٹکا رہنے دیا جہاں وہ توہین اور تمسخر کا نشانہ بنتا رہا۔ ہنریک نے اگلے دس سال قشتالہ پر حکومت کی اور آرگون کے پیٹر سوم سے صلح کی، باہم بچوں کی شادیاں کیں جس کے نتیجے میں ان دونوں خاندانوں نے پندرہویں صدی کے سپین میں مضبوط عیسائی حکومت قائم کی۔

-1469میں تاجِ آرگون کے بادشاہ فرڈینینڈ نے . . . تاجِ قشتالہ کی شہزادی ازابیلا سے شادی کی اور دونوں شاہی خاندان شریکِ سلطنت بنے۔ یہ شادی خالصتاََ سیاسی مفادات کے لئے کی یا کروائی گئی تھی- امریکا والا کھوجی کولمبس ملکہ ازابیلا کی زیرِ پرستی1492میں نئی دنیا کی کھوج میں نکلا تھا۔مشہور مؤرخ اور لکھاری نسیم حجازی نے اپنا ناول “کلیسا اور آگ” فرڈینینڈ اور ایزابیلا کے اِس عہد کے پس منظر میں لکھا ہے۔ فرڈینینڈ اور ازابیلا، دونوں کیتھولک شہنشاہ کہلائے جنہیں اُن کی شاندار خدمات کے پیشِ نظر کلیسا نے یہ خطاب دیا۔

Fernando and Isabel

Fernando and Isabel


220px-Sabel_la_Ca izabella 1

-1492میں غرناطہ پر قبضہ کیا ۔ اسپین میں آخری مسلم امارت غرناطہ کے حکمران ابو عبداللہ نے اِن دونوں عیسائی حکمرانوں کے سامنے ہتھیار ڈال دیئے اور اس طرح اسپین میں صدیوں پر محیط مسلم اقتدار کا ہمیشہ کے لئے خاتمہ ہوگیا۔ معاہدے کے تحت مسلمانوں کو مکمل مذہبی آزادی کی یقین دہانی کرائی گئی لیکن عیسائی حکمران زیادہ عرصے اپنے وعدے پر قائم نہ رہے اور یہودیوں اور مسلمانوں کو اسپین سے بے دخل کردیا گیا۔

 ابو عبداللہ آئزابیلا اور فرڈیننڈ کے سامنے ہتھیار ڈالتے ہوئے

ابو عبداللہ آئزابیلا اور فرڈیننڈ کے سامنے ہتھیار ڈالتے ہوئے

کلیسا سے باقاعدہ حکم نامہ جاری کروانے کے بعد اِن دونوں کیتھولِک شہنشاہان(Reyes Catolics) نے سپین میں استرداد کی مہم شروع کی جو780 سال جاری رہی ۔مسلمانوں اور یہودیوں کو جبرا عیسائی بنایا گیا جنہوں نے اس سے انکار کیا انہیں جلاوطن کردیا گیا۔ جن پہ خفیہ اپنے مذہب پہ قائم رہنے کا الزام عائد کیا جاتا ، اُن کو گرفتار کرکے قید میں ڈال دیا جاتا، ٹارچر اور پوچھ گچھ ہوتی، بعض اوقات جلا دیا جاتا یا پھانسی لٹکا دیا جاتا ۔

Here is how his modern biographer, Clara Estow, sums up Pedro the Cruel:
He was raised at the age of sixteen to the most exalted post in the kingdom and, for the next twenty years, he did not enjoy more than a few moments of pleasure or peace. That many of his troubles were of his own design only makes his story more tragic than pathetic.

PETER, KING OF SPAIN
O Peter, noble, worthy pride of Spain
Whom Fortune held so high in majesty
Well should men of your piteous death complain
Out of your land your brother made you flee
And after, at a siege, by treachery
You were betrayed; he led you to his tent
And by his own hand slew you, so that he
Might then usurp your powers of government

Columbus before the Queen

Columbus before the Queen


Christopher Columbus enlisting the sympathetic interest of Isabella of Castile on behalf of his scheme for discovering the New World

Christopher Columbus enlisting the sympathetic interest of Isabella of Castile on behalf of his scheme for discovering the New World


Queen Isabella is said to have pawned her jewels to fund Columbus’s voyage to the Americas

Queen Isabella is said to have pawned her jewels to fund Columbus’s voyage to the Americas

The monk narrates of De Petro Rege de Cipro – 38

کینٹربری کہانیاں یوں جاری ہیں کہ تمام مسافر ، مونک کے المیہ تذکرے سُن رہے ہیں اور اب مونک بارہویں صدی کے اطالوی برنابو وِزکونٹی کی ہلاکت کے بعد ، سولہواں کردار متعارف کرواتا ہے۔

-پیٹر اوّل آف سائپرس:

1328-1369

Pierre_1er_de_Lusignan

جوکہ قبرص کا بادشاہ ہونے کے ساتھ ساتھ اپنے والد کی، خود اپنی زندگی میں ہی، تخت سے دستبرداری کے بعد1358سے1369میں اپنی وفات تک یروشلم کا برائے نام فرمانروا بھی رہا۔

O worthy Peter, Cypriot king who fought
At Alexandria masterfully
And captured it, who many a heathen brought
To woe! Your lieges in their jealousy
For naught but envy of your chivalry
Have slain you in your sleep before the morrow
So Fortune’s wheel can govern what shall be
And out of gladness bring mankind to sorrow

یہ چودہویں صدی کا زمانہ تھا ۔ چونکہ قبرص اُس وقت ایسی ریاستوں کے گھیرے میں آگیا تھا جو مسلم حکومتوں کے ماتحت تھیں ، چنانچہ قبرص کو مشرقِ وسطٰی میں کلیسا کے نمائندہ کا درجہ دے دیا گیا تھا۔ پیٹر کو اپنی حکومت اور ریاست کی اہمیت کا بخوبی اندازہ تھا ۔ اور اسی ناطے اُسے خود پہ عائد ذمہ داریوں کا شدت سے احساس تھا۔ وہ مسلم حکومت سے مقبوضہ یروشلم واپس لینے کے لئے پُرعزم تھا۔

cyprus-location

اطراف کی مسلم ریاستیں قبرص کے لئے ایک خطرہ تھیں۔ مشرقِ قریب کی سرزمین پر1291میں آخری صلیبی جنگ اپنے انجام کو پہنچی تھی۔ عیسائی گڑھ ختم کردیا گیا تھا۔ اُس وقت ایک نئی اسلامی حکومت اُبھر کر سامنے آئی تھی اور اب . . . عثمانیوں کی آنکھ بازنطینی عیسائی سلطنت کے باقی ماندہ حصّے پر لگی ہوئی تھی جہاں سے شورش کا اندیشہ تھا۔

عثمانی حتمی اور بنیادی طور پر ایک زمینی حقیقت تھے چنانچہ لاطینی عیسائی وحدتوں کو اپنا وجود اور دفاع قائم رکھنے کے لئے سمندر ہی میسر تھا۔ قبرص کے بادشاہ کروسیڈنگ روایات کے وارث تھے تاہم پیٹر کا والد اِس معاملے میں بہت سُست ثابت ہوا تھا۔ اپنے والد کے برعکس پیٹر نے دوبارہ کروسیڈنگ روایت کو اپنانے کا فیصلہ کیا۔ 1360میں ترک شہر اناطولیہ کے کنارے ایک قلعے “کوریکوس ” پر قبضے کے لئے ترکوں کے ساتھ معرکہ آرا رہا۔ قلعہ زیرِ نگین آگیا ۔ اپنے اہم محلِ وقوع کے سبب یہ قلعہ بہت سے حملہ آوروں کے ہاتھوں سے گزرتا ہوا آخرکار ترکوں کی ملکیت اور مسکن بنا۔

800px-Fortressarmenians5

پھر پیٹر یورپ کی طرف روانہ ہوا۔ یورپ اور روم کے سفر کے دوران اُس نے دیگر حکمرانوں کے سامنے ارضِ مقدسہ اور یروشلم کی فتح کا قصد ظاہر کیا اور اِس سلسلے میں اُن سے مدد کی درخواست کی۔ اُس نے انگلستان، جرمنی، فرانس، وینس، جینوا، پیراگوئے اور پولینڈ کا سفر کیا۔

پولینڈ اور پھر لندن میں تقریبات کے دوران ، رومن ایمپرر، ہنگری کے بادشاہ لوئی اول، ڈنمارک کے ولادی میر چہارم، ماسوریا کے سیموٹ، آسٹریا، پومیرینیا، باواریا اور رومن ڈیوکز سے اُس کی ملاقات ہوئی۔ لیکن اِن تمام ملاقاتوں میں اُس نے کسی سربراہ کو یورپ سے متعلق یا عیسائیت سے متعلق کروسیڈ میں شرکت کی دعوت نہیں دی۔

Feast held in London in honour of the King of Cyprus Pierre I Also present were the Kings of England, Scotland, France and Denmark

Feast held in London in honour of the King of Cyprus Pierre I Also present were the Kings of England, Scotland, France and Denmark

پیٹر، 11اکتوبر1365کو قبرصی اور مغربی قوّت کے ساتھ اسکندریہ کی طرف روانہ ہوا۔ یہ سفر کسی نتیجے کے بغیر ، . . واپسی پر ختم ہوا . . . ماسوائے یہ کہ قاہرہ کے سلطان سے اُس کے تعلقات خراب ہوگئے۔اور عیسائی تاجروں کو مصر اور شام کے تجارتی مراکز میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ پوپ اربن پنجم نے اِس صورتِ حال کے پیشِ نظر پیٹر کو فوری طور پر سلطانِ مصر سے صلح کرنے کا کہا۔

The sword was made in Italy in the mid-14th century. Its first duty was diplomatic, as a gift to the Mamluk Sultan of Egypt al-Nasir Hasan from Peter I, By Peter’s time, Cyprus was the last Crusader state in existence.

The sword was made in Italy in the mid-14th century. Its first duty was diplomatic, as a gift to the Mamluk Sultan of Egypt al-Nasir Hasan from Peter I, By Peter’s time, Cyprus was the last Crusader state in existence.

پھر پیٹر نے بیروت پر حملے کا ارادہ کیا . . . لیکن وینس کی جانب سے اُسے معاوضے کے بدلے دمشق پر حملے سے روکا گیا۔ جنوری1366میں طرابلس پر چڑھ دوڑنا، ناکام رہا اور ایک بار پھر پوپ اربن پنجم نے اُسے مصر کے ساتھ امن مذاکرات میں شامل کیا۔

مشرقِ وسطیٰ کے ساتھ تجارت سے قبرص نے بہت فائدہ اُٹھایا ۔ پیٹر کے وقت میں قبرص کا مشرقی ساحلی شہر “فاماگوستا” بحیئرہء روم کا امیر ترین شہر تھا جہاں آج بھی ترک عمارات نظر آتی ہیں ۔

Lala-Mustafa-Pasa-Mosque-Famagusta-Cyprus

Lala-Mustafa-Pasa-Mosque-Famagusta-Cyprus

مصر کے سلطان نے پیٹر کے طرابلس پر حملے کو صریحاََ بدنیتی سمجھا اور اُس کے ساتھ تجارتی تعلقات نہیں چاہتا تھا۔ سلطانِ مصر نے ایشیائے کوچک کے امراء کو دفاعی امداد دی تاکہ پیٹر کے خلاف کاروائی کی جاسکے۔ ۔ ۔ پیٹر کی، شام کے ساحل، طرابلس اور شامی شہر “لاذقیہ” پر جھڑپیں جاری رہیں اور سلطان سے تعلقات بگڑتے چلے گئے۔ پیٹر کے فوجی دستے دفاعی اخراجات کے لئے آمدنی تنگ ہونے پر بحیرہء روم کے کنارے اسلامی چھاؤنیوں پر چھاپے مارتے اور حاصل ہونے والے مال سے گزارا کرتے۔

The-Taking-of-Alexandria-by-Guillaume-de-Machaut-1372-1377

اِسی دوران قبرص میں اندرونی معاملات انتشار کا شکار ہوگئے، پیٹر اپنے مشیروں اور مصاحبوں کی طرف سے عدم اعتماد کا شکار ہوگیا۔ اور . . . 17جنوری1369کو اُسی کے تین نائٹز اور جرنیلوں نے اُسے اپنے ہی محل کی خوابگاہ میں قتل کردیا ۔

Assassinat of king peter 1 of cyprus

Assassinat of king peter 1 of cyprus

بےانتہا جرات کے باوجود ایک عبرتناک موت پیٹر کا مقدر بنی۔ پیٹر کئی غلط فیصلوں کے باوجود اپنے صلیبی عزم اور ارادے کی وجہ سے بہادری اور شجاعت والا سُورما مانا جاتا ہے۔

2012-03-06 07.40.37

The monk tells of De Barnabo de Lumbardi – 37

کینٹربری کہانیوں میں مونک اپنی کہانی سنارہا ہے اور چودہواں الم ناک انجام اُس نے “ہوگولینو آف پِیسا” کا سنایا جس نے آخری ایام گولانڈی مینار میں ایڑیاں رگڑ رگڑ کر گزارے اور مؤرخین کو اِس بات میں اختلاف ہے کہ آیا وہ مرتے دم آدم خوری کا مرتکب ہوا یا نہیں ۔ یہ سب مسافر کینٹربری کے بڑے کلیسا کی جانب مذہبی زیارت کی غرض سے روانہ ہوئے تھے اور راستے میں ایک دوسرے کو کہانیاں سنانے کا معاملہ طے پایا تھا۔ سب مسافروں نے اپنی اپنی باری پہ کہانی سنائی، یہ کہانیاں الگ الگ اصناف سے تعلق رکھتی ہیں اور جب مونک کی باری آئی تو اس نے ایک مکمل کہانی کی جگہ مشہور شخصیات کےعروج و زوال پہ مشتمل تذکرے سنائے جن کے انجام المیہ اور عبرت ناک تھے ۔ ان تذکروں کو پڑھنے کے دوران آج کا قاری تاریخِ بعید و قدیم کے کئی چہروں سے شناسا ہوتا ہے اور یہ ضرورسوچتا ہے کہ اِن سب واقعات میں کہیں کوئی اشارہ یا سبق پنہاں ہے ؟

مونک کی سولہویں روداد کے مطابق تیرہویں صدی میں سائپرس کا پیٹر اوّل استبداد اور اقتدار کے نشے کا شکار ہوکر بے بسی کی موت مرا۔ پیٹر اوّل کے دردناک قتل کے بعد اُس کا بیٹا پیٹر دوم تخت نشین ہوا ۔ پیٹر دوم نے روم کے علاقے میلان کے گورنر “بارنابو وِزکونٹی”کی بیٹی “ویلنٹینا” سے شادی کی۔

اگلی پندرہویں سوانح اِسی ” بارنابو وِزکونٹی” کی ہے ۔

وِزکونٹی خاندان نے چودہویں صدی سے پندرہویں صدی کے وسط تک، تقریباََ150سال میلان پر شاندار حکومت کی۔ آج کے میلان میں جابجا پُرشکوہ عمارات کی صورت میں اِس خاندانِ شاہی کے جاہ و جلال کی نشانیاں نظر آتی ہیں۔ بارنابو وِزکونٹی کی روداد کے سلسلے میں اِس خاندان کے پس منظر اور چند افراد کا کچھ تعارفی ذکر ضرور دلچسپی اور عبرت کا باعث ہوگا۔

Coat of arms of the House of Visconti, on the Arch-bishops' palace in Piazza Duomo, in Milan, Italy.

Coat of arms of the House of Visconti, on the Arch-bishops’ palace in Piazza Duomo, in Milan, Italy.

میلان کے وِزکونٹی خاندان نے ایک قوی الجثہ سانپ کے نشان کو اپنی علامت کے طور پر اپنایا ۔ اس سانپ کو اطالوی میں بِزکوائن کہا جاتا ہے ۔ اِس سانپ کا منہ کھلا ہے اور ایک “ساراکین” کو نِگل رہا ہے۔ ساراکین کا لفظ میڈیول زمانے میں اہلِ شرق، اہلِ اسلام یا عربوں کے لئے مستعمل تھا۔ غالب گمان ہے کہ . . . ساراکین یا ساراسین کا لفظ، عربی لفظ ‘شرقیّوں’ سے ماخوذ ہے۔ یہ علامت آج بھی میلان سے بخوبی منسوب ہے۔

420px-Coat_of_arms_of_the_House_of_Visconti_(1395).svg
600px-Alfa_Romeo.svg

-برنابو وِزکونٹی :

1323-1385

برنابو ایک اطالوی سپاہی تھا جو بعد میں میلان کا لارڈ اور گورنر بنا۔ میلان میں پیدا ہوا۔ 27 سال کی عمر میں ویرونا کے لارڈ کی بیٹی “بیٹرائس” سے شادی ہوئی جس سے دونوں شہروں میلان . . اور . . ویرونا میں سیاسی اور ثقافتی تعلقات بڑھے۔

Bernabò_e_Beatrice_Visconti

O Barnabo Visconti, Milan’s great
God of delight, scourge of Lombardy, why
Should not all your misfortunes I relate
Once you had climbed to an estate so high
Your brother’s son, in double sense ally
Your nephew and your son-in-law as well
Put you inside his prison, there to die
Though why or how I do not know to tell

-1354میں اپنے چچا جیوانی کی وفات پر میلان کا لارڈ بنا۔ اقتدار کو وسعت دینے کے جنون میں، بہت سی جنگی مہمات کے بعد ، ویرونا سمیت کئی مشرقی علاقوں پر قابض ہوگیا ۔ برنابو کے ساتھ اِن علاقوں کی حکمرانی میں اُس کے دو بھائی، ماتیو اور گلیاتزو بھی شریک تھے۔ ماتیو پر چالاکی کا شُبہ گزرا تو باقی دونوں نے1355میں اُس کے کھانے میں زہر ڈلوا کر اُسے مروادیا۔ اُس کی جاگیر کو برنابو اور گلیاتزو نے شرقاََ غرباََ آپس میں تقسیم کرلیا۔

Galeazzo II Visconti

Galeazzo II Visconti

کچھ عرصے بعد ، برنابو کے بھائی گلیاتزو کی صحت خراب ہونے لگی ، اور اُس نے اپنی زندگی پاویا کے شہر تک محدود کرلی جہاں ایک عالی شان قلعہ اُس نے خود بڑے اہتمام سے تعمیر کروایا تھا۔ گلیاتزو نے ریاست کے مجرموں کو “پہیے پر پھانسی” دینے کی وجہ سے بہت بدنامی کمائی۔ پہیہ ، پُر اذیّت سزائے موت دینے کا ایک آلہ تھا جس میں ریاستی یا سرکاری مجرموں کو نوکدار کیلوں والے ایک بڑے چوبی پہیے سے باندھ کر لوہے یا لکڑی کے لَٹھ سے مارا جاتا جس سے اُن کی ہڈیاں ٹوٹ جاتیں۔ ایک دن ہولناک تعذیب اور تشدد ہوتا اور ایک دن چھوڑ دیا جاتا ۔ چالیس دن تک جاری رہنے والی اِس سزا کے لئے کلیسائی اصطلاح ‘قارسیما’ استعمال کی جاتی تھی جس کے معنی چالیس دن کا عمل یا چِلّہ ہے۔ یہ پہیہ اُنیسویں صدی تک جرمنی میں مستعمل تھا۔

Cartoucheroué
a96697_a458_st-catherine

برنابو ایک ظالمانہ ، بےرحم حکمران اور چرچ کا سفّاک دشمن تھا۔ اطراف کی ریاستوں سے مستقل جھڑپیں جاری رکھنے پر1364میں ایک امن معاہدے کے تحت برنابو پر5لاکھ اطالوی سکوں کا جرمانہ عائد کیا گیا۔ اس کے بعد بھی اُس نے متعدد بار اپنے اطراف کے شہروں پر چڑھائی کی۔ جب اُس نے پوپ کے شہر بولوگنا پر قبضہ کیا تو پوپ اربن پنجم نے اِس کی اتھارٹی مسترد کردیا ۔ برنابو کئی بار پوپ کے خلاف محاذ آرا ہوا لیکن ہر بار پوپ اور کلیسا کے وفادار فوجیوں کے ہاتھوں منہ کی کھانا پڑی۔

Visconti,_Barnabò

اِن حرکتوں کی وجہ سے1373میں برنابو اور گلیاتزو پر دین سے خارج ہونے کا تکفیری حکم اور قطع تعلق کا فرمان جاری کردیا گیا۔ کلیسائی جائیداد ضبط کرلی گئی۔ لین دین اور معاشرتی تعلقات سے منع کردیا گیا۔ بارنابو کو لادین قرار دے کر اُس کے خلاف کروسیڈ کو جائز قرار دیا گیا۔

برنابو نے . . . . پوپ کا فرمان لانے والے دو قاصدوں یا مندوبین کو حراست میں رکھا اور انھیں مجبور کیا کہ وہ . . . چمڑے کا فرمان، اُس پر لگی مہر اور ریشمی ڈوری ، جس سے فرمان باندھا گیا تھا، کھائیں۔

quill and parchment

-1378 میں ایک طرف گلیاتزو کی موت واقع ہوئی اور دوسری طرف میلان میں طاعون کی وبا پھوٹ پڑی لیکن ایسے میں بھی برنابو کی شورشیں جاری رہیں اور اُس نے کلیسا کے خلاف مزاحمت جاری رکھی۔ اُس وقت تک برنابو کی خود سر مطلق العنانیت اور بے تحاشا ٹیکسوں نے میلان کے عوام کو مشتعل کردیا تھا۔ ظلم آخری حد پہ پہنچ چکا تھا اور اقتدار کی سرمستی سر چڑھ کر بول رہی تھی۔ ازل کے فیصلوں میں ایسی بدمستی کے بعد زوال کا وقت طے ہے۔

402px-Josse_Lieferinxe_-_Saint_Sebastian_Interceding_for_the_Plague_Stricken_-_Walters_371995

آخرکار1385میں بارنابو کے بھتیجے، گیان گلیاتزو وِزکونٹی نے اُسے معزول کردیا اور اپنے لارڈ ہونے کا اعلان کردیا ۔ گیان نے اپنے چچا برنابو کو اطالوی صوبے لومبارڈی، کے ضلع میلان کے علاقے ٹریزو میں واقع، طاقتور وزکونٹی خاندان کی ملکیت ایک بہت بڑے اور مضبوط قلعے میں قید کروادیا۔ قسمت کی ستم ظریفی دیکھیئے . . . کہ بارنابو اپنے دورِ حکومت میں خود ٹریزو کے اس قلعے کا مختارِ کُل رہا تھا اور اِس قلعے کی تعمیر اور آرائش پر خصوصی توجہ دی تھی۔

2013-09-07-15-39-23

اِس قلعے میں برنابو آخری سانس تک قید رہا ۔ کہا جاتا ہے کہ اُسی سال کے آخر میں اُسے بھتیجے کے حکم پر زہر دے کر مار دیا گیا تھا۔ جبر و استبداد اور طاقت کے گھمنڈ کے بعد قلعے کی خاموش اور کرخت دیواروں کے درمیان بےبسی کی موت نے برنابو کو اپنی آغوش میں لے لیا ۔

برنابو وزکونٹی کی سترہ اولادیں ہوئیں جن میں سے سات بیٹیاں تھیں۔ ایک بیٹی “ویلنٹینا” کی شادی پیٹر دوم آف سائپرس سے ہوئی ۔ جبکہ ایک بیٹی “کترینا وزکونٹی” نے اپنے چچا کے بیٹے “گیان گلیاتزو وزکونٹی” سے شادی کی اور ڈچس آف میلان کہلائی۔ اُس کے دو بیٹوں گیان اور فلپّو میں سے تخت و تاج فلپّو کے نصیب میں آیا اور وزکونٹی خاندانِ عالیہ کی روایت قائم رہی۔ البتہ فلپّو، وِزکونٹی خاندان کے آخری مرد کی حیثیت سے1447میں اِس دنیا سے رخصت ہوا۔ اُس کی واحد طبعی اولاد، اُس کی بیٹی “بیانکا ماریا ” تھی جو ایک کنیز کے بطن سے تھی۔ یوں میلان کا تخت ، جس کی خاطر زمین کئی بار وزکونٹی خون سے رنگی گئی، وِزکونٹی خاندان سے سفورزا خاندان کو منتقل ہوگیا۔ میلان کا اقتدار، فلپّو کی بیٹی کے ذریعے اُس کے داماد فرانسسکو سفورزا اوّل کے نصیب میں آیا جو ایک اطالوی سُورما کی سات غیر قانونی اولادوں میں سے ایک تھا۔

Bianca_Maria_Visconti_and_Francesco_I_Sforza

Bianca_Maria_Visconti_and_Francesco_I_Sforza

بارنابو وِزکونٹی کی اپنی تیرہ غیر قانونی اولادیں تھیں جن کو1384کی ایک تقریب میں قانونی قرار دے دیا گیا تھا۔

برنابو کے بعد اُس کا بھتیجا گیان گلیاتزو وِزکونٹی میلان کی حکومت کو بامِ عروج پر لے گیا۔ وہ میلان کا پہلا ڈیوک اور “سی نی یور” کہلایا ۔ بہت سی تعمیرات اور اصلاحی کام کروائے۔

Gian Galeazzo Visconti

Gian Galeazzo Visconti

میلان کا مشہور گرجا گھر / دوعومو دی میلانو/ Duomo di Milano
اٹلی کے شہر میلان میں واقع ہے اور میلان کے آرک بشپ کی نشست ہے۔ گیان گلیاتزو نے اس گرجا گھر کی تعمیر میں خصوصی دلچسپی لی، مشہور معمار متعین کئے ۔ لگ بھگ ڈیڑھ سو میٹر بلند گرجا گھر کیتھولک عیسائی طرز عبادت کی روایات، غیر معمولی ورثہ اور شاندار گوتھک طرز تعمیر کی وجہ سے دنیا بھر میں شہرت رکھتا ہے۔ چودھویں صدی عیسوی سے انیسویں صدی عیسوی تک تعمیر ہونے والے اس گرجا گھر کا شمار دنیا کے بڑے ترین گرجا گھروں میں ہوتا ہے۔

Duomo Di Milano

Duomo Di Milano


OLYMPUS DIGITAL CAMERA

پاویا کا “وزکونٹی قلعہ” بھی ایک نشانِ عبرت ہے جسے برنابو کے بھائی گلیاتزو نے تعمیر کروایا اور وہیں قیام پذیر رہا۔ بعد ازاں گیان گلیاتزو نے اِس سے ملحقہ ایک چارٹر ہاؤس بنوایا ۔ چارٹر ہاؤس سے مراد مختلف عمارات پہ مشتمل ایسا کمپلیکس ہے جس میں گرجا گھر، خانقاہیں، راہبوں کے حجرے، مزار اور مقبرے، میوزیم، لائبریری، رہائشی محلات اور دربار شامل ہوں۔ چارٹر ہاؤس کی عمارات پہلے پہل کلیسائی اثر کے تحت سادہ بنائی جاتی تھیں مگر بعد ازاں رینے سانس نے جدّت کی راہیں کھولیں اور کلیسا ئی گرفت کمزور پڑنے لگی ۔

پاویا کا وزکونٹی قلعہ

پاویا کا وزکونٹی قلعہ


800px-Lombardia_Pavia2_tango7174
pavese-certosa-chiostro_piccolo_or-foto_U.Barcella
800px-PathToTheCertosaDiPavia
pavese-certosa-chiostro_grande-foto_U.Barcella
Pavese-Certosa_di_Pavia_(PV)-int

رینے سانس کے زیرِ اثر اِن عمارات اور اِس چارٹر ہاؤس کے لئے نامور مصوّر اور معمار متعین کئے جاتے جو غمِ روزگار سے بےگانہ ہوکر لازوال شہ پارے تخلیق کرتے۔ رینے سانس یا نشاۃ الثانیہ کا بہت سا تخلیقی کام اسی طرح وجود میں آیا ۔ پاویا کے چارٹر ہاؤس میں ، جہاں وزکونٹی خاندان کے مقبروں پر مشتمل شہرِ خاموشاں اِس دنیا کی بے ثباتی کی داستان ہے ، وہیں سو سے زائد مصوّروں کے بےمثل شہ پارے آویزاں ہیں جو رینے سانس آرٹ میں ایک اہم مقام رکھتے ہیں۔ یہیں لیونارڈو ڈونچی کی پُراسرار مسکراہٹ والی “مونا لیزا ” بھی آرٹ کے قدردانوں میں گھِری نظر آتی ہے۔

800px-MonaLisaShield

آج کے میلان میں جابجا وِزکونٹی خاندان کے پُرشکوہ محلات اور مضبوط، بلند و بالا قلعے دیکھنے والوں کی دلچسپی کا باعث ہیں۔ اِن میں ٹریزو کا قلعہ سرِ فہرست ہے۔ دو جانب سے دریا میں گھِرا ، یہ وہی قلعہ ہے جہاں برنابو نے قید میں آخری لمحات گزارے اور پھر زہر خورانی سے ہلاک ہوا۔ ایک شاندار زندگی کے بعد زوال آیا اور پھر بے بسی کی موت اُس کا مقدر ہوئی۔ بس اقتدار کو جانے والا راستہ ایسا ہی مشکل ہوتا ہے جہاں چلنے والے بڑے بڑے پھسل جاتے ہیں اور بدنام ہوکر اگلے جہان سِدھارتے ہیں۔ میلان کے سفورزا قلعے میں برنابو کا ایک مجسمہ بھی عبرتِ عالم بنا کھڑا ہے۔

Castello de trezzo

Castello de trezzo


Trezzocentraletaccani-Centrale Taccani Trezzo d'Adda
Castello_Sforzesco

Castello_Sforzesco


Monument to Bernabò Visconti (1323-1385). The monument comes from the now demolished church of San Giovanni in Conca (whose ruins s

The monk regrets De Hugelino comite de Pize -36

کینٹربری کہانیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ موسمِ بہار کی آمد کے ساتھ ہی، لندن کے مضافات سے اُنتیس مسافروں کا ایک قافلہ ، کینٹربری کے بڑے کلیسا کی جانب عازمِ سفر ہے۔ چودہویں صدی میں سفر کچھ ایسے آسان نہ تھے، چنانچہ سفر کی صعوبتوں سے توجہ ہٹانے اور جی کو بہلانے کے لئے زائرین نے دورانِ سفر،آپس میں کہانیاں سنانے کا مقابلہ طے کیا۔ سولہ مسافروں کے بعد جب مونک کی باری آئی تو مونک نے ایک مکمل کہانی نہیں سنائی بلکہ بہت سی مشہور شخصیات کی شاندار زندگی اور بالآخر عبرت انجام پر مبنی حالات سنائے۔ ان شخصیات میں سے چند ایک دیومالائی کردار تھے اور کچھ قبل مسیح کے تاریخی مشاہیر، اور اب وہ بارہویں صدی کے ایک کردار کا ذکر کررہا ہے جو کہ بدترین انجام سے دوچار ہوا۔

مونک کی المیہ روداد آگے بڑھتی ہے اور مونک اب گیارہویں شخص کے حالِ زندگی اور بدترین موت کا ماجرا سناتا ہے۔

- اوگولینو/ہوگولینو آف پِیسا:

Conte-Ugolino-Pisa-Dante-Stampa-antica-1700

(1220 – 1289)

اطالوی ٹھاکر یا نواب، منصب دار ، سیاستدان اور نیوی کمانڈر تھا۔ متعدد بار غداری کا مرتکب ٹھہرا، الزامات عائد ہوئے ، مقدمات چلائے گئے ، جیل ہوئی ، اور سزائے موت پائی ۔ اطالوی شاعر دانتے نے ڈیوائن کامیڈی میں اِس کردار کے بارے میں خاصی تفصیل سے لکھا ہے اور اس کے عبرت ناک انجام کا نقشہ کھینچا ہے۔ جن مصوروں نے ڈیوائن کامیڈی کو کینوس پہ رنگوں کی مدد سے پیش کیاِ، انہوں نے ہوگولینو کو بھی اپنے تخیّل کے زور پر دِکھایا۔ مجسمہ سازوں نے اپنے تئیں ہوگولینو کے انجام سے انصاف کرنے کی بھرپور کوشش کی ہے ۔

tumblr_mcs4apVVeI1rufr77o8_500
tumblr_lppulmmjBY1qggdq1

Of Ugolino, Count of Pisa’s woe
No tongue can tell the half for hot pity
Near Pisa stands a tower, and it was so
That to be there imprisoned doomed was he
While with him were his little children three
The eldest child was scarce five years of age
Alas, Fortune! It was great cruelty
To lock such birds into such a cage

MetaArchibishop of Pisa, accuses Ugolino of treachery and orders him, his sons, his grandsons thrown into prison, where they are abandoned, the key thrown into the river.
Count Ugolino della Gherardesca and his sons left to starve in the Muda
Ugolino

پیسا . . .آج بھی اپنے مشہور ٹیڑھے مینار کی وجہ سے تمام عالم کی دلچسپی کا محور ہے اور ہر سال سیاحوں کی ایک بڑی تعداد اس مینار کو دیکھنے آتی ہے۔ سائنسدانوں نے ہر ممکن سعی کرلی کہ اس مینار کے جھکاؤ کا سبب معلوم کرسکیں مگر یہ راز کبھی کسی پہ نہ کھُلا ۔ مشہور ریاضی دان اور ماہرِ فلکیات، گیلیلیو کا شہر بھی پِیسا ہی تھا۔ کم ہی لوگ جانتے یا سوچتے ہوں گے کہ اسی شہر میں بدبخت ہوگولینو بھی کبھی تخت و تاج پہ متمکن تھا جو ایک کرب ناک موت سے ہم آغوش ہوا۔

Pisa-Italia
Gallileo on the tower of Pisa

تیرہویں صدی کے اٹلی میں ، پِیسا کا علاقہ ، دو نمایاں گروہوں ، گولیفر اور گھیبلن کے مابین بٹا ہوا تھا ۔ اقتدار اور حکم کی رسّہ کشی ان دونوں گروہوں کے درمیان ایک عرصے سے جاری تھی۔ اوگولینو کا تعلق ، گھیبلن والوں سے تھا۔

-1271 میں اوگولینو کی بہن کی شادی نسبتاََ زیادہ مستحکم ، وِزکونٹی خاندان میں ہوئی جو کہ مخالف گروہ گولیفر کے حلیف تھے ۔ اوگولینو نے اپنی وفاداریاں مخالف گروہ سے وابستہ کرلیں جس پر اُس کے حامیوں میں اُس کے خلاف شکوک و شبہات پیدا ہوگئے۔

-1274 میں اوگولینو کو اپنے بہنوئی جیوانی کے ہمراہ گرفتار کرلیا گیا اور اُن پر گولیفرز کے ساتھ مِل کر پِیسا کی حکومت کے خلاف سازشوں کا الزام عائد کیا گیا۔ اوگولینو کو جیل کی سزا ہوئی اور جیوانی کو شہر بدر کر دیا گیا۔ جیوانی کچھ ہی دنوں بعد چل بسا ۔ تو گویا جس کے سبب اوگولینو پر شک تھا، وہ سبب ختم ہوجانے پر ، اُسے آزاد کر دیا گیا۔ رہائی کے بعد اوگولینو نے دشمن گولیفرز کے ساتھ مِل کر اپنے آبائی شہر پِیسا پر حملہ کیا اور دشمن کے تمام قیدی آزاد کروا لئے۔

fight  between the militias of the Guelf and Ghibelline factions in the Italian commune of Bologna

fight between the militias of the Guelf and Ghibelline factions in the Italian commune of Bologna

-1284 میں پِیسا اور جنواGenoa میں جنگ چھڑ گئی۔ اوگولینو ، پِیسا کا نیوی کمانڈر تھا ۔ پِیسا کے بحری جنگی بیڑے میں شامل جہازوں اور سپاہیوں کو خاطر خواہ نقصان پہنچا اور . . . .پھر ایک بدترین مانوس منظر . . . کہ اوگولینو اور اُس کی ڈویژن نے دشمن کے سامنے ہتھیار ڈال کر . . اپنی شکست تسلیم کر لی۔ بعد ازاں اُس کے اِس اقدام کو صریحاََ غداری، ملّی بھگت اور وطن دشمنی کا نام دیا گیا ۔ جس کی پاداش میں اُس پر سنگین فردِ جرم عائد کی گئی ۔

ِپیسا کے دشمن، جنوا کی طرف سے ، قبضے کے بعد غدارِ وطن اوگولینو کو ، پِیسا کا حاکم مقرر کیا گیا۔ اوگولینو نے جنوا اور پِیسا کے مابین قیامِ امن کی ہر کوشش کو ناکام بنایا ، امن کی ہر پیشکش میں رکاوٹ ڈالی کیونکہ امن کی صورت میں ، اُس کے اپنے بھائی بندے اُسے غدار قرار دیتے اور اُس کی حاکمیت خطرے میں پڑ جاتی۔ چنانچہ وہ دشمن کے مفادات کا تحفظ کرتے ہوئے ، اپنی ہی مادرِ وطن پر ، دشمن کا نمائندہ بن کر حکومت کے مزے لیتا رہا۔

-1287 میں اوگولینو کا ، اپنے بھانجے سے جھگڑا ہوگیا اور اُس کا بھانجا مخالف گروہ گھیبلن سے جا ملا۔ اِس حرکت کے جواب میں اوگولینو نے گھیبلنز کے سرکردہ گھرانوں کو پِیسا شہر سے نکال باہر کیا اور اُن کے محلات تباہ کر دیئے ۔

-1288- جنوا سے امن مذاکرات نہ ہونے کی وجہ سے ، پِیسا کی معیشت پر بہت بُرا اثر پڑا۔ کاروبار تباہ ہوگئے۔ افراطِ زر بے انتہا بڑھ گئی۔ خوراک کی قلت ہوگئی اور جرائم بڑھ گئے۔ لوگوں میں بےچینی اور تشویش پھیل گئی۔ عوامی مظاہرے اور باغیانہ تحریکیں عام ہونے لگی۔

ایک عوامی مظاہرے کے دوران ، اوگولینو نے آرچ بشپ کے بھتیجے کو قتل کر دیا جس سے عوام مشتعل ہوگئے ۔ گھیبلن کی سربراہی میں ایک مسلح گروہ نے اوگولینو کا تعاقب کیا۔ اوگولینو ٹاؤن ہال میں مورچہ بند ہوگیا ۔ بپھرے عوام نے ٹاؤن ہال کو آگ لگا دی اور اوگولینو کو ہار ماننی پڑی۔ وہ گرفتار ہوگیا۔

مختلف الزامات اور غداری کے مقدمات کے بعد، اوگولینو کو اُس کے دو بیٹوں، اور دو پوتوں کے ساتھ ، گولانڈی مینار میں قید کردیا گیا۔ گولانڈی مینار آج بھی موجود ہے اور ایک عمارت کی تعمیر میں شامل کرلیا گیا ہے۔

The Torre dei Gualandi

The Torre dei Gualandi


Conte_Ugolino_torre_della_fame_gualandi_pisa

The clock tower connects two Medieval towers, one of which is part of an infamous historic event. In the 1200s, prominent Pisan citizen Count Ugolino was involved in political intrigue which resulted in his arrest. He and his family were supposedly locked up in the Torre dei Gualandi and left to starve. Legend has it that the Count went mad and consumed his granddaughter. The episode is featured in Dante’s Inferno and is the reason the tower is more commonly known as Torre dei Fame, or Tower of Hunger

Arno_River_in_Pisa

Arno_River_in_Pisa

-1289میں آرچ بشپ کے حکم پر مینار کی چابیاں ، آرنو دریا میں پھینک دی گئیں ۔ جو اس بات کی دلالت تھی کہ اب اوگولینو کو تا دمِ مرگ اسی مینار میں تڑپنے کے لئے چھوڑ دیا گیا ہے۔ اس کے بعد اوگولینو کا حال کسی کو معلوم نہیں کہ مینار کے اندر کیا ہوا۔ البتہ تاریخی محققین ، مصوروں اور شاعروں نے اپنا اپنا دماغ لڑایا اور اپنے اپنے اندازے پیش کئے کہ آخری ایّام میں اوگولینو اور اُس کے بیٹوں اور پوتوں کے مابین کیا ہوا ہوگا۔ بھوک، پیاس اور قیدِ تنہائی کے ہاتھوں تڑپ تڑپ کر جان دیتے ہوئے ، مینار کے اندر آخری مناظر کیا ہوں گے؟ بیٹوں نے باپ کو کیا پیشکش کی ہوگی، میرے قلم میں وہ الفاظ لکھنے کی سکت نہیں، چنانچہ دانتے کے اشعار اور مندرجہ ذیل اقتباس پیش ہے۔

اطالوی شاعر دانتےؔ(1205-1321)نے اپنی نظم “انفرنو” بمعنی ‘جحیم’ میں، اوگولینو کو جہنم کے اُس حصے میں دکھایا ہے جہاں اپنے وطن ، نسل اور قبیلے کے غداروں کو دردناک سزا دی جارہی ہے۔

69ugolino

دانتےؔ ہی نے ایک تمثیلی نظم “ڈیوائن کامیڈی” میں اوگولینو اور اُس کے بیٹوں کا مکالمہ لکھا ہے جو اُن کے مابین مرنے سے پہلے ہوا۔

‘Father our pain’, they said,
‘Will lessen if you eat us you are the one
Who clothed us with this wretched flesh: we plead
For you to be the one who strips it away’.
(Canto XXXIII, ln. 56–59)

… And I,
Already going blind, groped over my brood
Calling to them, though I had watched them die,
For two long days. And then the hunger had more
Power than even sorrow over me
(Canto XXXIII, ln. 70-73)

Ugolino’s statement that hunger proved stronger than grief, has been interpreted in two ways, either that Ugolino devoured his offspring’s corpses after being driven mad with hunger, or that starvation killed him after he had failed to die of grief

Ugolino and his sons
Inferno_Canto_33,_Gustave_Dorè_2
Inferno_Canto_33,_Gustave_Dorè

Scientific analysis of the remains

In 2002, paleoanthropologist Francesco Mallegni conducted DNA testing on the recently excavated bodies of the Ugolino and his children. His analysis agrees with the remains being a father, his sons and his grandsons. Additional comparison to DNA from modern day members of the Gherardesca family leave Mallegni about 98 percent sure that he has identified the remains correctly. However, the Forensic analysis discredits the allegation of cannibalism. Analysis of the rib bones of the Ugolino skeleton reveals traces of magnesium, but no zinc, implying he had consumed no meat in the months before his death. Ugolino also had few remaining teeth and is believed to have been in his 70s when he was imprisoned, making it further unlikely that he could have outlived and eaten his descendants in captivity. Additionally, Mallegni notes that the putative Ugolino skull was damaged; perhaps he did not ultimately die of starvation, although malnourishment is evident

Blake_Hell_33_Ugolino

Ugolino and his sons in their cell, as painted by William Blake circa 1826. Ugolino della Gherardesca was an Italian nobleman who, together with his sons Gaddo and Uguccione and his grandsons Nino and Anselmuccio were detained in the Muda, in March 1289. The keys were thrown into the Arno river and the prisoners left to starve. According to Dante, the prisoners were slowly starved to death and before dying Ugolino’s children begged him to eat their bodies

452px-Ugolino

The monk tells of Nero – 35

چودہویں صدی کے مشہور انگریز شاعر جیفری چاوسر کی کئی جلدوں پر مشتمل نظم کینٹربری کہانیاں، آج بھی انگریزی پڑھنے والوں کے لئے ایک خاص کشش رکھتی ہے۔ تقریباََ دنیا کی سبھی یونیورسٹیوں کے انگریزی نصاب میں یہ نظم یا اس کے کچھ حصے شامل کئے جاتے ہیں۔ اس نظم کے تمام کردار اپنی اپنی جگہ منفرد ہیں ۔ اس نظم کے مطابق لگ بھگ انتیس مسافروں نے اکٹھے کینٹربری کے بڑے کیتھیڈرل کے لئے سفر کا ارادہ کیا ۔

چاوسر کے زائرین کا سفر کینٹربری کی جانب رواں دواں ہے اور اب باری ہے مونک کی . . . کہ وہ سفر کے آغاز میں طےکردہ اصول کے مطابق اپنی کہانی سُنائے لیکن مونک نے ایک باقاعدہ کہانی کی بجائے سترہ ایسی شخصیات کا احوال سنایا جو سطوت اور سلطنت کے عروج پہ تھیں اور پھر اپنے کسی عمل کی پاداش میں اُن پہ زوال آیا اور اُن کا دردناک انجام ہوا۔

رومی جولیئس سیزر کی عبرت ناک موت کے بعد تیرہواں نام “نیرو” کا ہے۔

-12-نیرو:

37-68عیسوی

NERO

NERO

نیرو ، سلطنتِ روم کا پانچواں اور آخری سیزر تھا۔ جی ہاں . . .بالکل بانسری والا نیرو۔ اِس کا پورا نام ” نیرو کلاڈئیس سیزر آگسٹس ” تھا اور نیرو کے ساتھ ہی جولیو کلاڈئیس ڈائے نیسٹی یا خاندان ِ شاہی کا عہد اختتام پذیر ہوا۔

-37 عیسوی میں پیدا ہوا ۔54سے68تک روم کے سیاہ و سفید کا مالک رہا ۔ مؤرخ فیصلہ نہیں کرپائے کہ اُس کے سیاہ کارنامے زیادہ ہیں یا سفید۔ نیرو ظلم، جنونی سفاکی اور بے حسی میں شہرت رکھتا تھا۔ نیرو کے عہد کا ایک مؤرخ زیادہ مستند مانا جاتا ہے جس کا نام “ٹیسی ٹس” Tacitus تھا ۔آج نیرو کے بارے میں حاصل کردہ بیشتر معلومات کا مصدر یہی مؤرخ ہے۔

نیرو اپنے چچا کے قتل کے بعد تخت نشین ہوا۔ نیرو کو اُس کے چچا کلاڈئیس نے گود لیا ہوا تھا ۔ کہا جاتا ہے کہ کلاڈئیس کو نیرو کی ماں “اگرِپنا” نے قتل کروایا تھا ۔ اگرِپنا نے اپنے شوہر کی وفات کے بعد کلاڈئیس سے اسی مقصد کے تحت شادی کرلی تھی۔ نیرو کی ماں چاہتی تھی کہ کلاڈئیس کے اپنے طبعی بیٹے ” بریٹا نیکا س” کے جگہ نیرو بادشاہ بنے۔

نیرو شروع سے ہی منہ زور اور جنونی تھا ۔ اقتدار نے اِس فطرت کو ہوا دی اور اُس نے اپنی ماں اگرِپنا، دو بیویوں اوکتاویا اور پوپیا سبینا . . . اور اپنے محسن چچا کلاڈئیس کے بیٹے بریٹانیکا سBritannicus کو قتل کروایا۔ نیرو نے پہلی بیوی اوکتاویا کو قتل کروایا اور اُس کے بعد پوپیا سبینا کے شوہر کو مروا کر اُس سے شادی کی۔ نیرو کی ماں نے اِس اقدام کو اُس کی بادشاہت کے لئے خطرہ سمجھتے ہوئے مخالفت کی تو نیرو نے ماں کو ایک کشتی میں ڈبو کر مارنے کا پلان بنایا ۔ کشتی ڈوبی تو اگرِپنا تیر کر جان بچانے میں کامیاب ہوگئی۔ چار ناکام قاتلانہ حملوں کے بعد نیرو نے اپنے جلادوں سے ماں پر حملہ کروایا ۔ کئی وقائع نگاروں کے مطابق نیرو خود بھی ماں کو قتل کرنے والوں میں شامل تھا۔ اگرِپنا نے مرنے سے پہلے بیٹے پر لعنت بھیجی ، بد دعا مانگی اور آخری الفاظ تھے کہ ‘میری کوکھ پر ضرب لگاؤ جہاں سے ایسے بدبخت بیٹے نے جنم لیا’۔ کچھ کہتے ہیں کہ یہ الفاظ نیرو سے ہی مخاطب ہو کر اگرِپنا نے کہے جس نے ایسا ہی کیا ۔

Smite my womb

Agrippina crowns her son Nero

Agrippina crowns her son Nero

Though Nero was as vile and villainous
With rubies, sapphires, pearls of purest white
Were all his clothes embroidered; one could tell
In precious stones he took a great delight

He had Rome burnt for his delight, a whim
And senators he ordered slain one day
That he might hear the cries that came from them

He slew his brother, by his sister lay
And mangled his own mother–that’s to say
He slit his mother’s womb that he might see
Where he had been conceived. O well away
That he held her no worthier to be

Not one tear from his eye fell at the sight
He simply said, “A woman fair was she
The wonder is how Nero could or might
Be any judge of her late beauty.

Then ordered wine be brought, which instantly
He drank–he gave no other sign of woe
When power has been joined to cruelty
Alas, how deeply will the venom flow

-65میں نیرو کی دل پسند بیوی “پوپیا سبینا” مرگئی۔ 66کےآغاز میں اُس نے “میسیلینا” سے شادی کرلی اور اُس سے اگلے سال اُس نے ایک لڑکے “سپورس” سے بیاہ رچالیا۔ نیرو نے سپورس کا مخصوص آپریشن کروا کر اُس کو اپنے حرم میں شامل کیا ۔ شاہی اور عوامی تقریبات میں سپورس ملکہ کا مخصوص شاہی لباس پہنا کرتا اور اُسے ‘ایمپرس’ اور ‘لیڈی’ جیسے شاہی القابات سے پکارا جاتا ۔ مؤرخین کے ہاں اِس بارے میں متضاد آراء ملتی ہیں کہ نیرو کے حرم میں سپورس سے پہلے بھی ایک مرد شامل تھا۔ کچھ اُسے دیگر غیر فطری حرکتوں اور محرّمات کی ہتک کا عادی بتاتے ہیں۔ایک تاریخ دان کے مطابق نیرو نے اپنی محبوب بیوی پوپیا کو اُمید کی حالت میں دھکّا دے دیا تھا جو کہ جان لیوا ثابت ہوا، اِسی غم میں نیرو دیوانہ ہوگیا تھا ۔ ایک اور ذریعے کے مطابق سپورس اور پوپیا سبینا میں بہت زیادہ مشابہت تھی جو سپورس کو حرم میں شامل کرنے کی وجہ بنی اور نیرو . . . سپورس کو پوپیا کہہ کر پکارا کرتا ۔

نیرو کا اتالیق ، روم کا مشہور فلسفی “سینکا” نیرو کو اُس کے غلط کاموں پر ٹوکتا رہتا تھا ۔ اِسی بات پہ طیش کھا کر نیرو نے اُسے بھی مروادیا تھا۔

This Nero had a master in his youth
To teach to him the arts and courtesy
This master being the flower of moral truth
In his own time, if books speak truthfully

And while this master held authority
So wise he made him in both word and thought
That it would be much time ere tyranny
Or any vice against him would be brought

This master Seneca of whom I’ve spoken
To Nero had become a cause of dread,
Chastising him for every good rule broken
By word, not deed. As he discreetly said

“An emperor, sir, must always be well bred
Of virtue, hating tyranny.” Defied
He wound up in a bath where he was bled
From both his arms, and that’s the way he died

روم کی بدترین آگ کا دن19جولائی64 عیسوی بتایا جاتا ہے۔ روم شہر کی خوفناک آگ پانچ روز تک بھڑکتی رہی۔ 14میں سے 3اضلاع مکمل طور پر خاکستر ہوگئے۔ اِس آگ کے اسباب میں بھی دو تین مختلف آراء ملتی ہیں۔ کچھ مؤرخ اِسے حادثاتی ، کچھ مسیحیوں کی لگائی ہوئی اور کچھ اِسے خود نیرو کے حکم پر لگائی گئی، بتاتے ہیں۔

799px-Jan_Styka_-_Nero_at_Baiae

زیادہ تر یہی بات کہی جاتی ہے کہ نیرو نے روم کو خود آگ لگوائی تھی تاکہ وہاں وہ مہنگے ترین جواہرات سے مزین اپنا عالی شان محل تعمیر کرسکے۔300ایکڑ رقبے پر بنے اِس شاندار عمارت کا نام (Domus Aurea)تھا جو لاطینی الفاظ پر مشتمل ہے اور اِس کا مطلب ہے “سنہری مکان” “دی گولڈن ہاؤس” ۔ اِس محل کے اصل مقام کے بارے میں قیاس آرائیاں کی جاتی ہیں مگر اِس محل کے نشان اپنے مکین کی طرح ، صفحہءہستی سے مِٹ چکے ہیں۔

entrance Roma, la Domus Aurea, ingresso
e2133 Domus aurea print1

آج “ڈومس آوریا” کی اصطلاح، امارت ، بیش قیمت اور پُر تعیّش کے معانی میں، مارکیٹنگ اور کمرشل مقاصد کے لئے استعمال ہوتی ہے جس میں لگژری ہوٹلوں سے لے کر مہنگی ترین خمر کے اشتہارات شامل ہیں۔

domus-1

عام طور پر یہی مشہور ہے کہ جب روم جل رہا تھا تو نیرو بانسری بجا رہا تھا۔ یہ بھی کہا گیا کہ وہ ہومر کی نظم بھی گا رہا تھا جس میں شہر ٹرائے کی تعریف بیان کی گئی ہے۔ تاریخی اعتبار سے اُس وقت روم میں بانسری کا وجود نہیں تھا چنانچہ عین ممکن ہے کہ وہ “بربط ” بجا رہا ہو۔ انگریزی محاورے میں “فِڈل” کا لفظ استعمال ہوتا ہے جس کا مطلب سارنگی، ایک تارہ یا وائلن جیسا ساز ہے۔ روم کے جلنے کے دوران نیرو کے بربط بجانے میں کتنی سچائی ہوگی، اِس بات سے قطع نظر، نیرو کے ساز بجانے کا منظر بہت سے مصوّروں کے لئے دلچسپی کا باعث رہا اور انھوں نے کینوس پر اپنے اپنے تخیل کے مطابق اِسے پیش کیا۔

412px-Mousai_Helikon_Staatliche_Antikensammlungen_Schoen80_n1
article-2194564-14B7B2B2000005DC-591_624x392

Nero fiddles by Leviathansmiles

Nero fiddles by Leviathansmiles


nero-jpg-749636-757794

To ‘fiddle while Rome burns‘ refers to the belief that the infamous Emperor Nero played the lyre (there were no fiddles yet) while Rome was burning. Idiomatically it means someone is doing nothing about a serious problem

مؤرخ ٹیسی ٹس ایک مختلف روایت بتاتا ہے۔ اُس کے مطابق جب روم شعلوں کی لپیٹ میں تھا تو نیرو ، روم سے 40میل دور اینٹیم شہر میں تھا ۔ اینٹیمAntium سے واپسی پر اُس نے ذاتی خزانے سے متاثرین کی بحالی کے لئے اقدامات کئے۔ بےگھر ہونے والوں کے لئے اپنا محل کھول دیا ۔ روم کو نئے سِرے سے بسایا ۔ عمارتیں اور کشادہ مڑکیں تعمیر کروائیں۔ نیرو کے مخالف تاریخ دان نیرو کو جنون کی حد تک حُبِ نفس اور ذاتی تعریف کا دلدادہ بتاتے ہیں اور اُس کے فلاحی کاموں کی یہی توجیہہ پیش کرتے ہیں۔

-64عیسوی میں نیرو نے روم کی آگ کے الزام میں ، وسیع پیمانے پر عیسائیوں کو قتل کروایا ۔ عیسائی مخالف قتلِ عام کے لئے تعذیب اور قتل کے ہولناک طریقے استعمال کئے۔ ٹیسی ٹس لکھتا ہے کہ عیسائیوں کو صلیبوں پر کِیلا جاتا ، جنگلی جانوروں کی کھالوں میں سِلوایا جاتا ، بھوکے کتوں اور شیروں کے سامنے ڈالا جاتا اور نیرو خود چیر پھاڑ کے مناظر سے لطف اندوز ہوتا اور سب سے بڑھ کر یہ کہ . . . ملزمان پہ آتش گیر مادہ اُنڈیل کر نیرو کے باغ میں رات کو روشنی کے لئے بطور مشعل جلایا جاتا ۔

sewn in skin by nero

sewn in skin by nero


martyrs
Christian Martyrs in the Coliseum by Konstantin_Flavitsky

Christian Martyrs in the Coliseum by Konstantin_Flavitsky

سزا ؤں پہ عمل درآمد قدیم رومن اکھاڑے “کولوزیئم” میں ہوتا جہاں عوام الناس اِن مناظر کو دیکھنے جمع ہوتے۔ اگرچہ کولوزیئم کی تعمیر کا مقصدگھڑ دوڑ، نیزہ بازی، کُشتی اور مختلف کھیلوں کا انعقاد تھا ، لیکن اِسی اکھاڑے میں ریاست کے دشمنوں کو عبرت ناک سزائیں دی جاتیں۔

colosseum aerial view

colosseum aerial view


colosseum

colosseum


Siemiradzki_Christian_Dirce
XY2-1285447 - © - Classic Vision

مؤرخ کہتا ہے کہ کولوزئیم کے فرش پر ریت بچھائی جاتی تاکہ مجرموں کا رِستا ہوا خون جذب ہوسکے۔ اِسی کولوزئیم میں عیسائیت کے بےشمار پیروکاروں کو موت کے گھاٹ اُتارا گیا۔ اب بہت سی کمپیوٹر گیمز میں کولوزئیم کا تصور متعارف کروایا گیا ہے۔

1024px-Jean-Leon_Gerome_Pollice_Verso

کولوزیم کے احاطے میں بیٹھے لوگ

کولوزیم کے احاطے میں بیٹھے لوگ


CircusMaximus2
dg3-coliseum

-66عیسوی میں یونانی اور یہودی آبادیوں کی طرف سے بھاری ٹیکسوں کے خلاف احتجاج ہونے لگا ۔ یروشلم میں رہنے والے ، رومن باشندوں پر حملے کر کے اُنھیں وہاں سے نکل جانے پر مجبور کیا جانے لگا۔ نیرو نے اپنے سپہ سالار ‘ویس پے سئین’ کو فوج کی کمان دے کر ‘جوڈیا’ بھیجا جہاں اُس نے جوڈیا کی تمام سرزمین پر قبضہ کرلیا اور یروشلم کو محاصرے میں لے لیا۔

-67میں ، نیرو کے حکم پر ، عیسائیت پر کاربند ہونے کے جرم میں سینٹ پیٹر یا پطرس اور سینٹ پال کو قتل کیا گیا۔ کولوزئیم کے قریب واقع ” سرکس میکسی مس” میں سینٹ پیٹر کو اُلٹا مصلوب کیا گیا۔ یہ اقدام پطرس کی درخواست کے جواب میں کیا گیا کیونکہ پطرس نے درخواست کی تھی کہ صلیب پہ مرنے کا اعزاز یسوع مسیح سے وابستہ ہے اس لئے اُسے کسی اور طرح مارا جائے۔ چنانچہ سینٹ پیٹر کو اُلٹا لٹکایا گیا جس کے سبب آج بھی اُلٹی صلیب کو ‘لاطینی صلیب یا سینٹ پیٹر کی صلیب’ کہا جاتا ہے۔ سینٹ پیٹر کو مسیحِ مقدس کے12حواریوں میں سے مقرّب ترین کہا جاتا ہے۔ کیتھولک عیسائی عقیدے کے مطابق، یسوع مسیح نے سینٹ پیٹر کو اپنے بعد کلیسا کی زمامِ کار سونپی تھی جس کے بعد پیٹر کیتھولک کلیسا کے اولین پوپ اور روم کے پہلے پادری بنے۔

780px-Circus_Maximus_(Atlas_van_Loon)
463px-Caravaggio-Crucifixion_of_Peter

کہا جاتا ہے کہ جب پیٹر کی موت ہوگئی تو اُسے قبرستان لے جا کر دفنایا گیا اور اُس کے معتقدین چوری چھُپے اُس کی قبر کو پوجتے رہے۔ سینٹ پیٹر کی قبر پر اُسی جگہ روم میں “سینٹ پیٹر کیتھیڈرل” تعمیر کیا گیا جو کہ عیسائیت کا دل اور پاپائے روم کی رہائش گاہ ہے اور “ویٹیکن سِٹی” کا مرکز ہے ۔ قدیم کلیسا کی تعمیر 320ء میں ہوئی تھی، لیکن کافی عرصہ گذرجانے کی بنا پر عمارت خستہ ہونے لگی ۔ لہذا موجودہ باسلیکا کی تعمیر 1506ء میں شروع کی گئی جو 1626ء میں مکمل ہوئی۔ اس عمارت میں دور نشاۃ ثانیہ کے فن تعمیر کے نمونے جابجا نظر آتے ہیں جن کی تخلیق میں مائیکل اینجلو کا قابلِ ذکر حصہ رہا ہے۔ 1940سے1964تک ہونے والی تحقیقات نے بھی اِس جگہ پر سینٹ پیٹر کے دفن ہونے کی تصدیق کر دی ہے۔اس نئی تعمیر کے بعد اکثر پاپائے کلیسا ، پطرس کی جانشینی کی علامت کے طور پر باسلیکا کے نیچے واقع ہال میں مدفون ہوئے۔اب یہ عمارت پطرس باسلیکا ، کہلاتی ہے۔لاطینی میں اسے basilica sancti petriکہا جاتا ہے۔ کیتھیڈرل اور باسیلکا میں بنیادی فرق طرزِ تعمیر کا ہے ، دیگر باتوں کے علاوہ باسلیکا میں کلیسا کی مخصوص عبادت گاہ کے علاوہ مذہبی تقریبات کے لئے نیم دائرے کی شکل میں ایک مرکزی جگہ بھی شامل ہوتی ہے ۔

2036287014_60b3df6621_b

-68 عیسوی میں نیرو کے مظالم کے سبب ، دو نمایاں بغاوتوں نے سر اُٹھایا ۔ فوج بھی اِن بغاوتوں کی سرپرستی کر رہی تھی چنانچہ فوج نے نیرو کا تختہ اُلٹ کر حکومت سنبھال لی۔ نیرو فرار ہوگیا۔ فوج اور حکومت کے سرکردہ افراد نے نیرو کو موت کی سزا سنائی۔ نیرو نے شہر سے باہر اپنے ایک وفادار سپاہی کے مکان میں پناہ لی اور اپنی قبر کھُدوائی۔ خودکشی کا ارادہ کیا۔ مرنے سے پہلے اپنی ماں پر لعنت اور ملامت بھیجی جس نے اُسے جنم دے کر یہ دن دِکھایا ۔بہت دیر متردد رہا لیکن جیسے ہی اُسے گرفتار کرنے کے لئے آنے والے سپاہیوں کے گھوڑوں کی ٹاپوں کی آواز سنائی دی، اُس نے اپنے ہاتھوں اور پیروں کی نَسیں کاٹ لیں اور خود کو ہلاک کرلیا۔

دوسری جانب نیرو کی موت کا سن کر اُس کے سپہ سالار “ویس پے سئین” نے یروشلم کا محاصرہ چھوڑ کر اقتدار کی فکر کی۔ نیرو کی موت کے ساتھ اُس کے خاندان سیزر کا نام ختم ہوگیا تھا کیونکہ31 سالہ نیرو کی واحد اولاد اُس کی ایک بیٹی تھی جو ‘پوپیا سبینا’ کے بطن سے تھی اور تین ماہ کی عمر میں وفات پا گئی تھی۔ روم کی حکومت کے باقی دعویداروں کو شکست دیتے ہوئے “ویس پے سئین ” کا اپنا بیٹا “ٹائی ٹس” روم کے تخت پر بیٹھا۔

-70عیسوی میں “ٹائی ٹس” نے اپنے باپ کی جنگ جاری رکھتے ہوئے یروشلم کی اینٹ سے اینٹ بجا دی اور وہاں کا “سیکنڈ ٹیمپل” یا ھیکلِ ثانی تباہ کردیا ۔ رومن سپاہی یروشلم کے مندر سے نوادرات اور مینورہ اُٹھا لائے جو کہ روم کے “کولوزئیم” کی تعمیرِ نو کے لئے چندے میں دے دئیے۔

800px-Arch_of_Titus_Menorah

-نیرو کی موت کے بعد اُس کے تخت پر بیٹھنے والےجانشین ٹائی ٹس نے یروشلم اور جودیا کی فتح کی یادگار کے طور پر روم میں ایک بلند قوس یا محراب (آرچ آف ٹائی ٹس) بنوائی۔ جس پر لاطینی میں ایک عبارت درج ہے۔

800px-Titus_hh2

Arch of Titus - inscription

Arch of Titus – inscription

The inscription reads:
SENATVS
POPVLVSQVE•ROMANVS DIVO•TITO•DIVI•VESPASIANI•F(ILIO) VESPASIANO•AVGVSTO
(Senatus Populusque Romanus divo Tito divi Vespasiani filio Vespasiano Augusto)
which means “The Roman Senate and People (dedicate this) to the divine Titus Vespasianus Augustus, son of the divine Vespasian

مونک نے 100لائنوں میں رومن سلطنت کے جنونی، جابر اور ظالم کا انجام سنایا ۔ نیرو جس کا دامن اپنوں کے خون سے بھی رنگا ہوا تھا اور بےشمار جانیں اُس کے ہاتھوں تکلیف دہ موت سے دوچار ہوئیں، جب مرا تو دنیا میں اُس کی سفاکی اور ستم کی لرزہ خیز داستانوں کے سِوا کچھ نہ رہا۔ سچ ہے کہ اقتدار اور تاجوری دائمی نہیں ہوتی ۔

Marble bust of Nero (palace of Versailles)

Marble bust of Nero (palace of Versailles)

The Monk mourns the De Julio Cesare – 34

چودہویں صدی کے مشہور شاعر جیفری چاوسر کی طویل نظم کینٹربری ٹیلز جاری ہیں، اُنتیس مسافر ، کینٹربری شہر کے بڑے کلیسا کی زیارت کے لئے سفر کررہے ہیں۔ سب مسافروں نے سفر کی طوالت اور اُکتاہٹ کو کم کرنے کے لئے آپس میں کہانیاں سنانی طے کیں۔ جب مونک کی باری آئی تو اس نے ایک ثابت کہانی کی بجائے مختلف نامور شخصیات کے دردناک انجام سنائے۔

جولیئس سیزر

اب مونک، بارہواں ماجرا، جولیئس سیزر کا سنا رہا ہے جو کہ سکندر اعظم سے بے حد متاثر تھا اور اس سے بڑھ کر فاتح عالم بننا چاہتا تھا تاہم دنیا فتح کرنے میں سکندر اعظم کی ہمسری نہ کرسکا۔ جولیئس سیزر نے زندگی کا پیشتر حصہ جنگی معرکہ آرائی میں صرف کیا اور تاریخ میں ایک بہادر جنگی جرنیل کے طور پہ یاد رکھا گیا۔ قبل مسیح کے کئی مؤرخین نے جولیئس سیزر کا احوالِ زندگی قلم بند کیا اور اُس کی زمینی اور بحری فتوحات کے بارے میں لکھا ۔

slide12-julius-caesar

جولیئس سیزر سویں صدی قبل مسیح کا ایک رومن جرنیل، سیاستدان، کونسلر اور لاطینی نثر نگار تھا۔ اُس نے کئی ایسے اقدامات کئے جس کے نتیجے میں محدود رومن جمہوریہ کا زوال ہوا ، اور ایک عظیم رومن سلطنت ظہور میں آئی۔

کئی موجودہ ممالک بشمول انگلستان، سپین، فرانس، اٹلی، یونان، ترکی اور مصر ، اِس عظیم سلطنت کا حصہ تھے۔ اِس رومی سلطنت زبان لاطینی اور یونانی تھی۔ مغربی رومی سلطنت کا مرکز روم جبکہ مشرقی بازنطینی سلطنت کا دارالحکومت قسطنطنیہ تھا۔ مغربی رومی سلطنت476میں جرمن وِزی گوتھوں کے ہاتھوں تباہ ہوئی جبکہ بازنطینی سلطنت1453میں عثمانیوں کے ہاتھ فتح ہوئی۔ مغربی تہذیب کی ثقافت، قانون، طرزِ حیات، فنون، زبان، مذاہب، طرزِ حکومت، افواج اور تعمیرات میں آج بھی رومی سلطنت کی جھلک نظر آتی ہے۔

جولیئس سیزر اور قلوپطرہ کا موضوع بھی مؤرخین اور لکھاریوں کے لئے دلچسپی کا محور رہا ہے ۔ کہا جاتا ہے کہ جب اس نے مصر فتح کیا تو وہاں کی ملکہ قلوپطرہ کی زلفوں کا اسیر ہوگیا اور کافی عرصہ وہاں مقیم رہا۔ تاہم اِ س بارےمیں کئی مختلف روایات ملتی ہیں ۔ البتہ مصّوروں اور فلم سازوں نے اِس موضوع پہ خوب طبع آزمائی کی ۔

julius-caesar-cleopatra-halloween-costume
caesarandcleopatra
Caesar_and_Cleopatra_-_1945_-_poster
MV5BMTM0MzAwMTcwOV5BMl5BanBnXkFtZTcwNzY2NDQyMQ@@._V1__SX961_SY539_
MV5BMjE2NjI4NzI0Ml5BMl5BanBnXkFtZTcwNjQxNTAwMQ@@._V1__SX961_SY539_
41hk3428TFL._SL500_AA240_

سکندر اعظم کی طرح جولیس سیزر بھی پیدائشی طور پر مرگی کا مریض تھا۔ وہ دورے کی حالت میں سرِ دربار بے ہوش ہوجاتا۔ مونک سناتا ہے:

JULIUS CAESAR-100BC- 44BC

Through wisdom, manhood, and great labor’s throes
From humble bed to royal majesty
This Julius as a conqueror arose
For he won all the West by land and sea
By strength of hand and by diplomacy
And made each realm to Rome a tributary
And then of Rome the emperor was he
Till Fortune would become his adversary

By wisdom, manhood and great labor Julius the Conqueror rose from humble birth to royal majesty, and won the entire occident over land and sea by the strength of his hand or by treaty, and made it tributary to Rome. And afterwards he was emperor, until Fortune became his adversary

بہادر پامپے ، جولیئس کا ایک سپہ سالار تھا اور جولیئس کی بیٹی ، جولیا کا شوہر تھا۔ جولیا کے مرنے کے بعد اِن دونوں میں پھوٹ پڑ گئی۔ بہت عرصہ خانہ جنگی میں مصروف رہنے کے بعد ، جولیئس نے حریف جرنیل پامپے کو شکست دی اور اسکندریہ میں اسے قتل کردیا گیا۔ پامپے کا کٹا ہوا سر ، اور جولیئس کی عطا کردہ مہر ، جب جولیئس کو پیش کئے گئے تو وہ آبدیدہ ہوگیا۔ مونک کہتا ہے:

O mighty Caesar, who in Thessaly
Faced Pompey, your own father-in-law, who drew
About him in the East all chivalry
As far as where each day dawn breaks anew
Through your knighthood that host you took and slew
(Except the few who then with Pompey fled
The East thereby put in such awe of you
Thank Fortune that so well you marched ahead

Here I’ll bewail a little, if I might
Pompey the Great, this noble governor
Of Rome who from the fray had taken flight
One of his men, a false and traitorous cur
Beheaded him that he might win the favor
Of Julius, who received the severed head
Alas, Pompey the Eastern conqueror,
That to such end by Fortune you were led

O mighty Caesar, in Thessaly you made war against Pompey, your father-in-law, who controlled all the chivalry of the orient as far as dawn of day, and by your knighthood you did capture and slay all except a few people who fled with him. Thus you did put the orient in awe, thanks to Fortune who aided you so well. But now I will bewail this Pompey a little while, this noble governor of Rome, who fled in this battle. One of his men, I say, a false traitor, struck off his head and brought it to Julius to win his favor. Alas, Pompey, conqueror of the orient, that Fortune should have brought you to such an end

 Caesar Addressing his Troops


Caesar Addressing his Troops

مصر سے واپسی پر سیزر نے سربراہ مملکت کے طور پر روم کے امور سنبھالے اور شاید وہی دنیا کا پہلا جرنیل تھا جو کہ بادشاہ بنا ۔ روم میں بہت سی اصلاحات کروائیں۔ رومن کیلنڈر کو تبدیل کر کے جولیئن کیلنڈر متعارف کروایا جو کہ گریگورین کیلنڈر کے آنے تک رائج رہا ۔ دونوں کیلنڈروں میں فرق نکالیں تو کچھ گھنٹوں کا ہی ہوگا۔

سلطنت روم کی کونسل نے سیزر کو اٹلی کے علاوہ سبھی ملکوں کا بادشاہ بنانا طے کرکے اس کے تخت پر بیٹھنے کی تاریخ مقرر کر لی ۔ دوسری طرف اس کے ساتھی مارکوس جونیئس بروٹس نے دیگر کے ساتھ مل کر اس کے قتل کی سازش شروع کردی۔ ان لوگوں کا کہنا تھا کہ سیزر کو بادشاہ بننے کا کوئی حق نہیں کیونکہ بادشاہ بننا روم کے قانون کے خلاف ہے۔ اس سے صرف سیزر ہی روم کے سیاہ و سفید کا مالک بن جاتا۔

9780486113661_p0_v2_s260x420

To Rome again repaired this Julius
With laurel crowned, upon his victory.
Then came the time when Brutus Cassius,
Who envied Caesar’s high prosperity
Began conspiring in full secrecy
Against his life. With subtlety he chose
The place of death, and planned that it should be
By way of daggers as I shall disclose

Julius returned to Rome in his triumph, crowned high with laurel. But at one time, Brutus Cassius, who ever bore ill-will to his high estate, made a secret deceptive conspiracy against him, and chose the place where he should die by poniards, as I will tell you

800px-Jean-Léon_Gérôme_-_The_Death_of_Caesar_-_Walters_37884

مارچ 44 قبل مسیح میں اسے سر دربار قتل کردیا گیا۔ قاتلوں کا سربراہ بروٹس تھا۔ دربار کے بیشتر اراکین نے سیزر کو گھیر لیا ۔ اُسے بہت سی کاری ضربیں لگائیں۔

800px-Cesar-sa_mort

زخمی سیزر، دربار میں فرش پہ گِرا تڑپتا رہا ۔ اُس نے اپنے آپ کو برہنہ ہونے سے بچانے کی کوشش کی۔اِسی اثنا میں سیزر نے قاتلوں میں اپنے ساتھی بروٹس کی شرکت دیکھی تو کہا کہ: بروٹس تم بھی؟ پھر تو سیزر کو ضرور مر جانا چاہئے۔

et_tu_brute_bumper_sticker-ra42965f7f95e40c7877c47b4d4ca6612_v9wht_8byvr_512
app4j6dy1yrn8kki

سیزر کا یہ جملہ آج عام طور پر گفتگو میں اُس وقت استعمال کیا جاتا ہے جب اپنا کوئی قریبی شخص ہی انتہائی دیدہ دلیری سے دھوکہ دے ۔

article-2216396-157617A8000005DC-751_634x511

سیزر کو قتل کرکے قاتلوں نے اُس کے خون سے ہاتھ دھوئے۔ سیزر کے قتل کے نتیجے میں روم میں خانہ جنگی شروع ہوگئی جس میں بروٹس کے تمام ساتھی مارے گئے جبکہ اس نے خود کشی کرلی۔

The world-renowned Royal Shakespeare Company returns to BAM with a new twist on Shakespeare's Julius Caesar. Set in present-day Africa and featuring an all-black cast, this visionary production echoes recent regime struggles throughout the continent. The
Julius caesar

This Julius to the Capitol one day
Had made his way, as frequently he chose
There fell upon him then without delay
This traitor Brutus and his other foes
Who with their daggers gave him several blows
And left him there to die when they were through
He groaned at but one stroke for all his throes
Or else at two, if all his tale is true

Julius_Caesar_by_Crowley_S

This Julius Caesar was so manly hearted
And had such love for stately probity
That, even as his wounds so sorely smarted,
He drew his mantle over hip and knee
So that his private parts no one could see
As he lay in a daze, the deathly kind
And knew that he was wounded mortally
Thoughts of decorum still were in his mind

Julius Caesar's death at the hands of Brutus and Gaius Cassius Longinus, and Porcia's suicide

Julius Caesar’s death at the hands of Brutus and Gaius Cassius Longinus, and Porcia’s suicide

One day, as he was accustomed, this Julius went to the Capitol, and there this false Brutus and his other foes seized him without delay and wounded him with many wounds, and there let him lie. And he never groaned except at one stroke, or else two, unless the books are false. So manly of heart was this Julius, and so well he loved dignified decorum, that with all his deadly sore wounds he cast his mantle over his hips, so that none should see his nakedness. Thus, as he lay dying in a trance, and knew truly that his life was spent, yet had he thought of dignity

murder-caeser

مونک آخر میں پھر نوحہ پڑھتا ہے کہ اے مؤرخو! تم نے کیا الم ناک حال بیان کئے ہیں اِن دونوں سُورماؤں کے، جن پہ پہلے قسمت مہربان تھی اور پھر دغا دے گئی ۔ طاقت، اقتدار اور تاج کبھی کسی کے نہیں ہوتے ۔ تو. . میرے ہم سفرو اور ساتھیو، ایسی آنی جانی شے پہ اعتبار کرنا ہی لا حاصل ہے۔

Lucan, you’re one authority I’ll note,
Suetonius, Valerius also
The story’s fully there in what you wrote
Of these two conquerors; to them we know
That Fortune first was friend and later foe
No man can put trust in her favor long,
We must keep both eyes on her as we go
These conquerors bear witness who were strong

Lucan, I commit this story to you, and to Suetonius, and Valerius also, who wrote beginning and end of it, how to these two great conquerors at first Fortune was friend and then their foe. Let no man trust long to have her favor, but evermore be watchful of her. Be warned by these mighty conquerors

cute_caesar__et_tu_bwute___by_kevinbolk-d3coeny
et_tu__brute__by_themrock-d3h4zph
et-tu-brute
julius-caesar-quotes-1